پنجاب کا مالی سال 2016.17ء کا 1600ارب روپے کا بجٹ آج پیش کیا جائیگا

پنجاب کا مالی سال 2016.17ء کا 1600ارب روپے کا بجٹ آج پیش کیا جائیگا

 لاہور(نمائندہ خصوصی)وزیر خزانہ پنجاب ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا کل مالی سال 17۔2016 کیلئے 1600 ارب روپے سے زائد کا بجٹ ایوان میں پیش کریں گی۔ صوبے کے سالانہ ترقیاتی پرگرام کی مد میں ساڑھے چار سو ارب روپے سے زائد رقم مختص کرنے کی تجویز ہے۔ذرائع کے مطابق ،پنجاب کے بجٹ کا مجموعی حجم 1600 ارب روپے سے زائد ہو گا۔ سالانہ ترقیاتی اخراجات کی مد میں 450 ارب روپے سے زائد رقم رکھے جانے کی تجویز ہے۔ صحت کیلئے 125 ارب سے زائد جبکہ تعلیم کیلئے 162ارب رکھے جانے کی تجویز ہے۔ لاہور اورنج لائن ٹرین منصوبے کیلئے 100 ارب روپے اور کینسر اور کڈنی لیور انسٹی ٹیوٹ کی تعمیر کیلئے دس ارب مختص کئے جانے کی تجاویز ہیں۔ ملتان اور فیصل آباد میٹرو بس منصوبوں کیلئے بھی 80 ارب روپے سے زائد رکھے مختص کئے جانے کی اطلاعات ہیں۔ مواصلات اور تعمیرات کیلئے اڑھائی سو ارب، صاف پانی کے فراہمی کیلئے 30 ارب روپے جبکہ پسماندہ علاقوں سے غربت کے خاتمے کیلئے 400ارب رکھے جائیں گے،لیپ ٹاپ سکیم کیلئے بھی ساڑھے 5 ارب رکھے جانے کی تجویز ہے۔ ذرائع کے مطابق، سالانہ ترقیاتی بجٹ کا 70 فیصد جاری جبکہ 30 فیصد نئی سکیموں پر خرچ کیا جائے گا۔پولیس اور زراعت کے محکموں اور انرجی کے منصوبوں کیلئے بھی بجٹ میں اضافہ کرنے کی تجاویز ہیں،سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ جبکہ کم سے کم اجرت 14 ہزار روپے مختص کئے جانے کی توقع ہے۔ صوبے کی معاشی ترقی کا ہدف 8 فیصد رکھا جائے گا جسے 2018 تک حاصل کیا جائے گا۔صوبے میں نجی سرمایا کاری کو آئندہ 2 سال میں دوگنا کیا جائے گا۔ سروسز پر سیلز ٹیکس کے دائرہ کار کو مزید وسیع کرنے اور دس نئی سروسز ٹیکس نیٹ میں لانے کی بھی تجویز ہے۔

مزید : صفحہ اول