آنے والے بجٹ عوام متوازن اور عوام دوست ہو گا :پرویز خٹک

آنے والے بجٹ عوام متوازن اور عوام دوست ہو گا :پرویز خٹک

  



نوشہرہ(بیورورپورٹ) وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خان خٹک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت کی اولین ترجیح غریب عوام ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف کے منشور کے مطابق صوبے کے وسائل غریب عوام کے بنیادی مسائل کے حل پر خرچ ہوں گے۔ پاکستان تحریک انصاف اوراس کی اتحادی حکومت نے بجٹ کی تیاری میں باہمی مشاورت سے صوبہ کا بجٹ تیار کیا ہے۔ انے والابجٹ متوان اور عوام دوست اور غریب عوام کی زندگی میں بہتر ی لائے گا۔ میڈیا بے پرکیاں اڑانے کی بجائے حقائق سامنے لائیں۔ مثبت تنقید کر خیر مقدم کرتے ہیں۔ من گھڑت کہانوں سے حکومت پر کوئی اثر نہیں ہوگا۔صوبائی نے حکومت نے سی پیک بجلی کے خالص منافع سو ملین کیوبک اضافی گیس سے صنعتی بستیوں کے لیے بجلی، چشمہ رائٹ بینک کینال اور توانائی کے منصوبوں کی جنگ جیت لی ہے۔ اور باقاعدہ مشترکہ مفادات کونسل سے ان منصوبوں کی منظوری لے لی گئی جس سے نہ صرف خیبرپختونخوا بلکہ چاروں صوبوں کویکساں فائدہ ملے گا۔ وہ نوشہرہ میں اخبار نویسیوں سے بات چیت کررہے تھے۔ اس موقع پر صوبائی وزیر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن میاں جمشید الدین کاکاخیل ، ایم پی اے میاں خلیق الرحمن ،ادریس خٹک، ایم این اے ڈاکٹر عمران خٹک ضلع ناظم لیاقت خان خٹک بھی موجود تھے۔ پرویز خان خٹک نے کہا کہ بجٹ کی تیاری میں تمام اتحاد ی جماعتوں سے باقاعدہ مشورہ کی ہے اور سب کو اعتماد میں لیاگیا ہے ۔ پی ٹی ائی اوراس کے اتحادی حکومت درحقیقت پسماندہ صوبے کی غریب عوام کی حالت زندگی بہتر بنانے غریبوں کااستحصال ختم کرنے طبقاتی نظام تعلیم کے خاتمے، صحت پینے کے صاف پانی کی فراہمی اور عام آدمی کی زندگی میں بہتر ی لانے پر تمام وسائل بروکار لارہی ہے ماضی میں عوام پر کوئی توجہ نہیں دی گئی۔ پی ٹی ائی کے چیرمین عمران خان کا وژن ہے کہ حکومت زیادہ سے زیادہ وسائل عام ادمی کے مسائل کے لیے خرچ کرے اسی ایک نکاتی ایجنڈے پر کام جاری ہے۔ انھوں نے کہا کہ میڈیا کئی روز سے صوبائی حکومت اور بجٹ پی ٹی ائی میں اختلافات کے حوالے سے بے پرکیاں اڑا رہا اس میں کوئی حقیقت نہیں پی ٹی ائی کے ارکان صوبائی اسمبلی متحد ہیں۔جبکہ اتحادی جماعتیں جماعت اسلامی اور قومی وطن پارٹی حکومت کاحصہ ہیں۔ ہم سب ایک ٹیم کی طرح صوبے کی ترقی چاہتے ہیں ماضی میں حکمرانوں نے عوام کی بجاے ذاتی مفادا ت کی سیاست کی۔ انھوں نے کہا کہ حکومت کے عوامی فلاحی کاموں اور بہترین پالیسیوں سے اپوزیشن جماعتیں خائف ہیں۔یہی وجہ ہے کہ وہ میڈیا کا سہا را لیکر اپنے آپ کو سیاست میں زندہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں کیونکہ ان کومعلوم ہے کہ صوبائی حکومت نے جو انقلابی اقدامات شروع کیے ہیں اس کو وہ اپنے لیے مستقبل میں خطرہ سمھجتے ہیں۔ سب کومعلوم ہے کہ پی ٹی ائی نے میرٹ اور انصاف پر مبنی معاشرہ قائم کیاہے۔ اور صرف درجہ چہارم ملازمین کے علاوہ تمام ملازمتیں این ٹی ایس اور مقابلے کے امتحانات کے زریعے دی جارہی ہیں تاکہ حقدار کو ان کاحق ملے انھوں نے کہا کہ اگر این ٹی ایس کا ادراہ صاف اور شفاف طریقے سے کام کررہا ہے۔ اوریہی وجہ ہے کہ جتنے قابل نوجوان ملازمتو ں میں ارہے ہیں۔ پہلی مرتبہ صوبے کے اداروں میں تبدیلی نظر ارہی ہے۔ انھو ں نے کہا کہ این ٹی ایس کے امتحانات یونین کونسل، ضلع اور صوبے کی سطح پر امتحان لیتے ہیں اور میرٹ بناتے ہیں۔ پولیس کی بھرتی ضلعی سطح پر ہورہی اور ضلعی سطح پر این ٹی ایس امتحانی نتائج دیتاہے اسی طرح تعلیم اور صحت اپنی پالیسیوں کے مطابق ملازمیتں دے رہی ہیں اگر کسی کے پاس این ٹی ایس کے خلاف کوئی ٹھوس ثبوت موجود ہو تو وہ سامنے لائیں۔ من گھڑت کہانی گھاڑنے کی بجائے میڈیا مثبت کردار ادا کرے ۔پرویز خٹک نے کہا کہ تمام تقرریاں اور تبادلوں کے لیے باقاعدہ ایک نظام ترتیب دیاگیا ہے ۔ آزاد اور غیر جانبدار ٹیموں نے عوامی رائے کی رپورٹیں شائع کی ہیں جس میں حکومت کی گڈ گورنس اور میرٹ کو چاروں صوبوں پر فوقیت دی ہے او ر اسی سے اپوزیشن خائف ہے۔ پرویز خٹک نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ صوبائی اسمبلی میں بجٹ پیش کریں گے اور بجٹ اکثریت سے پاس ہوگا۔ انھوں نے کہا کہ تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کے ساتھ غریب عوام کی فکر ہے اوروہ پورے ملک میں عوام کی بہتری چاہتے ہیں۔ عمران خان کی پالیسیوں پر عمل کیا جائے تو پاکستان دینا میں ایک باوقار ملک بن سکتا اور قرضوں کی بے ساکیھیوں کے بغیر پاکستان اپنے ہی وسائل میں بہت اگے نکل سکتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ عوام کی نظریں عمران خان پر اور انے والا وزیر اعظم عمران خان ہوگا۔ انھوں نے کہا کہ خیبرپختونخوا کی اتحادی حکومت کی کوششیں رنگ لائی ہے اور ہماری بھر پور جد وجہد اورکوششوں کی وجہ اور اللہ تعالی کے فضل وکرم سے صوبے کے حقوق کے لیے جو جنگ کی گئی اس میں بڑی حد تک کامیاب ہوچکے ہیں۔انھوں نے کہا کہ مشترکہ مفادا ت کونسل میں چائنا اقتصادی رہداری منصوبے میں پشاور سے ڈی ائی خان تک سڑک اور ریلوئے لائن انڈسٹریل پارک اور تمام سہولیات کا فیصلہ ہوچکا ہے اور ہماری جد وجہد کی وجہ سے ا سکافائدہ چاروں صوبوں کو ہوا۔ اور چاروں صوبوں میں ایک ایک انڈسٹریل پارک بنے گا۔ جو تمام سہولیات سے اراستہ ہوگا۔انھوں نے کہا کہ بجلی کے خالص منافع کا باقاعدہ معاہدہ کیا گیا۔ چھ ارب سے منافع اٹھارہ ارب روپے سالانہ تک پہنچا دیا۔ سابقہ بقایا جات میں مرکز صوبے کو ستر ارب روپے ادا کرے گا۔ اسی طرح اضافی گیس سو ملین کیوبک فٹ سے بجلی بنا کرصنعتوں کو دینے کے ساتھ ساتھ چشمہ رائٹ بینک کینال کے منصوبوں کی بھی مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں منظوری لی گئی اب ان منصوبوں کو کوئی نہیں روک سکے گا۔ انھوں نے کہا کہ مرکز نے بجلی کے منافع کے بقایا ت میں جون سے پہلے پچیس ارب دینی تھی جو اب تک نہیں دی ہماری اولین یہ ہے کہ بجلی کے مد میں پچیس ارب روپے کی پہلی پندرہ ارب کی دوسری اور اٹھارہ ارب روپے کے منافع کی رقم رواں سال ہر حالت میں وصول کریں گے یہ تاریخ بھی رقم کریں گے۔انھوں نے کہا کہ چشمہ رائٹ بینک کینال کے لیے مرکز نے بجٹ میں ایک ارب روپے کی رقم مختص کی ہے۔ اس منصوبے پر ایک سو بیس ارب روپے لاگت ائی گئی جس کے لیے صوبہ تیس فیصد اور مرکزی حکومت ستر فیصد رقم خرچ کرے گی۔انھوں نے کہا کہ اس سے نہ صرف صوبے کو پانی میں اپنا حق ملے گا۔ بلکہ صوبے کی لاکھوں ایکڑ اراضی سیراب ہوگی۔ جس سے صوبے میں زرعی انقلاب برپا ہوگا۔ اسی طرح صوبائی حکومت نئی اور پرانی صنعتی بسیتوں کو گیس سے بنے والی سستی بجلی فراہم کرکے صنعتی انقلاب لارہی ہے جس سے بے روز گاری میں بڑی حدتک کمی ائے گی۔ انھوں نے کہا کہ صوبے کے وسائل محدود ہیں اس میں اتنی سرکاری ملازمیں نہیں ہے اس لیے صنعتوں کے زریعے بے روزگاری ختم کریں گے۔

مزید : کراچی صفحہ اول