سعودی عرب میں وہ کاروبار جسے کرنے والے اگلے چند دن میں بے حد مالا مال ہونے والے ہیں

سعودی عرب میں وہ کاروبار جسے کرنے والے اگلے چند دن میں بے حد مالا مال ہونے ...
سعودی عرب میں وہ کاروبار جسے کرنے والے اگلے چند دن میں بے حد مالا مال ہونے والے ہیں

  



ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) ماہ رمضان کے دوران سعودی عرب میں کرنسی ایکسچینج کا حجم غیر معمولی حد تک بڑھ جاتا ہے، اور اگلے چند دنوں میں یہ کاروباری سرگرمی ایک بار پھر عروج کو پہنچنے والی ہے۔

عرب نیوز کے مطابق فارن ایکسچینج کے ماہرین کا خیال ہے کہ ماہ رمضان کے دوران صرف مکہ سنٹرل ایریا اور العزیزیہ کے علاقہ میں موجود 32 دکانوں کے ذریعے فارن ایکسچینج سرکولیشن تقریباً 50 کروڑ سعودی ریال تک پہنچ جائے گی۔ رواں سال کے پہلے چھ ماہ میں مکہ کے دفاتر کے ذریعے ہونے والی فارن ایکسچینج سرکولیشن 126164800سعودی ریال تھی۔

روزہ دار کھانے پینے کے علاوہ یہ گندے کام بھی چھوڑ دیں : امام و خطیب مسجد الحرام شیخ ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس

ریال کے ایکسچینج کے لئے نمایاں ترین کرنسی ڈالر ہے، جبکہ اس کے بعد مصری پاﺅنڈ کا نمبر آتا ہے۔ اکثر ممالک میں ڈالر کے استحکا م کی وجہ سے اسے ریال کے ساتھ ایکسچینج کرنے کو ترجیح دی جاتی ہے۔ اس کی ایک اہم وجہ یہ بھی ہے کہ سعودی ریال اور ڈالر کا ایکسچینج ریٹ کئی دہائیوں سے مستحکم چلا آرہا ہے۔

مزید : عرب دنیا