جرمنی ، مہاجرین کی رہائش گاہ میں آتشزدگی سے 37 افرادزخمی

جرمنی ، مہاجرین کی رہائش گاہ میں آتشزدگی سے 37 افرادزخمی

برلن(این این آئی)جرمن شہر بریمن میں پناہ گزینوں کی ایک رہائش گاہ میں آگ لگنے سے دس بچوں سمیت 37 افراد زخمی ہو گئے ۔ مقامی پولیس نے آگ لگنے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات شروع کر دی ہیں۔برطانوی ٹی وی کے مطابق جرمنی کے شمال میں واقع وفاقی جرمن ریاست بریمن میں قائم مہاجرین اور تارکین وطن کی رہائش گاہ میں آگ لگنے کا یہ واقعہ گزشتہ روز پیش آیا۔ رپورٹوں کے مطابق اس رہائش گاہ میں سو سے زائد تارکین وطن رہائش پذیر تھے۔مقامی پولیس اور فائر بریگیڈ اہلکاروں کے مطابق رہائش گاہ کے تہہ خانے میں رکھے کوڑے کرکٹ کے ڈرموں میں آگ لگی، جس نے تیزی سے عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔پولیس کا کہنا تھاکہ ابھی تک آگ لگنے کی وجوہات معلوم نہیں ہیں اور اس واقعے کی تحقیقات دائیں بازو کے شدت پسندوں کی جانب سے کسی ’ممکنہ مہاجر مخالف‘ حملے سمیت تمام پہلوؤں کو پیش نظر رکھتے ہوئے کی کی جا رہی ہیں۔

بریمن کے فائر ڈیپارٹمنٹ کا کہنا تھا کہ آتش زدگی کے باعث زخمی ہونے والے دس بچوں سمیت چودہ افراد کو شہر کے مختلف ہسپتالوں میں پہنچا دیا گیا ہے جہاں ان کا علاج کیا جا رہا ہے۔ جب کہ حادثے میں معمولی زخمی ہونے والے دیگر تارکین وطن کو موقع پر ہی ابتدائی طبی امداد فراہم کر دی گئی تھی۔آگ کی شدت اتنی زیادہ تھی کہ اب یہ عمارت رہائش کے قابل نہیں رہی۔ امدادی کارروائیوں میں فائر برگیڈ کی 27 گاڑیوں اور 70 امدادی اہلکاروں نے حصہ لیا۔جرمن سکیورٹی اداروں کی رپورٹوں کے مطابق جرمنی میں گزشتہ دو برسوں کے دوران لاکھوں مہاجرین اور تارکین وطن کی آمد کے بعد دائیں بازو سے تعلق رکھنے والے انتہا پسندوں کی جانب سے مہاجرین کے خلاف جرائم کے ارتکاب میں بھی کافی اضافہ ہوا ہے۔

مزید : عالمی منظر