ٹیچر ہلاکت کیس‘ سکول مالک‘ پرنسپل سمیت 3 ملزموں کی درخواست ضمانت پر سماعت 22 جون تک ملتوی کردی گئی

ٹیچر ہلاکت کیس‘ سکول مالک‘ پرنسپل سمیت 3 ملزموں کی درخواست ضمانت پر سماعت 22 ...

ملتان(خبرنگار خصوصی) ایڈیشنل سیشن جج ملتان نے ٹیچر ہلاکت کے مقدمہ میں ملوث نجی سکول کے مالک اور پرنسپل سمیت 3 ملزموں کی درخواست ضمانت پر سماعت 22 جون تک ملتوی (بقیہ نمبر33صفحہ12پر)

کردی ہے۔ فاضل عدالت میں نجی سکول کے مالک خالد جاوید وڑائچ، سکول کی پرنسپل نرگس بانو اور حارث جاوید وڑائچ  نے موقف اختیار کیا تھا کہ ان کیخلاف حافظ غلام یٰسین نے تھانہ شاہ رکن عالم میں مقدمہ درج کروایا تھا کہ اس کی21سالہ بیٹی عاصمہ سکول میں ٹریننگ میں شرکت کرنے گئی تو درخواست گزاروں نے اسے بلا کر بلاجواز سخت تنقید کا نشانہ بنایا جس کے باعث اسکی بیٹی سٹیج پر جانے کیلئے اٹھی تو چکراکر گر گئی جس سے اس کے سر میں شدید چوٹ لگ گئی۔ اسکی بیٹی کو ہسپتال منتقل کرنے کی بجائے درخواست گزاروں نے اسے ڈیڑھ گھنٹہ کلاس روم میں لٹادیا اور ڈیڑھ گھنٹے کی تاریخ کے بعد اسے رکشہ میں ہسپتال بھجوایا لیکن تب تک بہت دیر ہوچکی تھی اور اسکی بیٹی دم توڑ چکی تھی جبکہ وہ بے قصور ہیں اور مقدمہ بدنیتی پر مبنی درج کروایا گیا ہے لہٰذا پولیس کو انہیں گرفتار نہ کرنے کا حکم دیا جائے۔قبل ازیں فاضل جج نے ملزمان کی 50، 50 ہزار کے مچلکوں پر عبوری ضمانت منظور کرتے ہوئے پولیس کو گرفتار نہ کرنے کا حکم دیا تھا تاہم گزشتہ سماعت میں فاضل عدالت کو بتایا گیا کہ مدعی مقدمہ نے تفتیشی آفیسر کو صلح کا بیان قلمبند کرادیا ہے جو آئندہ عدالت میں بھی بیان جمع کرادے گا.

مزید : ملتان صفحہ آخر