عوام کو کورونا سے بچانے کیلئے سخت لاک ڈاؤن کی ضرورت: وزیر اطلاعات سندھ

عوام کو کورونا سے بچانے کیلئے سخت لاک ڈاؤن کی ضرورت: وزیر اطلاعات سندھ

  

کراچی (این این آئی)عوام کو کورونا وائرس سے بچانے کے لئے سخت لاک ڈاؤن کی ضرورت ہے یہ بات و زیر اطلاعات و بلدیات سندھ سید ناصر حسین شاہ نے امریکہ پاکستان بزنس ڈیولپمنٹ فورم کے پریذیڈنٹ آف ڈپلومیٹک اینڈ پولیٹیکل افئیرز اور جسٹس آف پیس ڈسٹرکٹ ساوتھ محمد امان پیر سے ملاقات کے موقع پر اظہار خیا ل کر تے ہوئے کہی انہوں نے کہاکہ عوام کو چاہئے کہ وہ حکومت کی جانب سے جاری کردہ تمام ایس اوپیز پر سکتی سے عمل کریں چونکہ کورو نا وائرس ایک عالمی وباء ہے جس سے نہ صرف لاکھوں انسانوں کی جانوں کا نقصان ہوا ہے بلکہ دنیا کی تمام معیشت تباہ ہونے کے علاوہ بے روزگاری اور کساد بازاری میں میں بھی خطرناک حد تک اضافہ ہوا ہے خصوصاََ پاکستان میں غربت کی لکیر سے نچے زندگی گزارنے والوں کی مشکلات میں بھی بے پناہ بڑھ گئی ہیں سید ناصر حسین شاہ نے کہاکہ حکومت نے ٹرانسپورٹ،صنعتیں اور شاپنگ سینٹرز کے لئے جو ایس او پیز بنائی ہیں ان پر عملدرآمد نہیں کیا جا رہا جس سے کورونا کے پھیلنے کے مزید امکانات ہیں انہوں نے کہاکہ تمام ایس او پیز عوام کو کورونا وائرس سے بچانے کے لئے جاری کیں ہیں اور عوام جتنی زیادہ احتیاط کریں گے اتنی ہی جلد وہ کورونا کو شکست دینے میں کامیاب ہوں گے اس موقع پرامریکہ پاکستان بزنس ڈیولپمنٹ فورم کے پریذیڈنٹ آف ڈپلومیٹک اینڈ پولیٹیکل افئیرز اور جسٹس آف پیس ڈسٹرکٹ ساوتھ محمد امان پیر نے کہاکہ سندھ حکومت کی کورونا وائرس کے مریضوں کے علاج اور ان کو بچانے کے لئے کی جانے والی کوششیں قابل ستائش ہیں جسے نہ صرف ملکی بلکہ غیر ملکی اداروں نے بھی سہرایا ہے انہوں نے کہاکہ کورونا وائرس ایک حقیت ہے عوام اسے مذاق نہ سمجھے اس وباء سے نمٹنے کے لئے جو اقدامات کئے جا رہے ہیں اس کو سنجیدہ لینا چاہئے محمد امان پیر نے کہاکہ کورونا وائرس کی وجہ سے عوام کو سخت مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہاہے جس کی وجہ سے غربت،بے روزگاری اور مہنگائی میں بھی اضافہ ہو رہا ہے جبکہ حکوت کی کوششیں ہیں کہ مہنگائی کو روکا جائے اور روزگار کے نئے مواقع فراہم کئے جائیں جس سے غربت میں کمی واقع ہوگی انہوں نے کہاکہ پاکستان سے جب تک کورونا وائرس کا خاتمہ نہیں ہو جاتا عوام کو احتیاطی تدابیر اور ایس او پیز پر سختی سے عملدرآمد کرنا ہوگا تا کہ انسانوں کی جانوں کو بچایا جا سکے۔

سید ناصر حسین شاہ

مزید :

صفحہ آخر -