ٹیکس اور ڈیوٹیز میں چھوٹ سے مقامی سطح پر تیار مصنوعات کو فروغ ملے گا، چیئر پرسن ایف بی آر

      ٹیکس اور ڈیوٹیز میں چھوٹ سے مقامی سطح پر تیار مصنوعات کو فروغ ملے گا، ...

  

اسلام آباد(آن لائن)وفاقی حکومت نے نئے مالی سال کے بجٹ میں ٹیکسز اور ڈیوٹیز کی مد میں مجموعی طور پر 45 ارب روپے کا ریلیف دیا ہے،بجٹ میں سیمنٹ،موبائل، کنسٹریکشن سیکٹر اور مقامی سطح پر تیار ہونے والی مصنوعات کو ریلیف دیا گیاہے،کرونا کی تشخیص اور علاج سے متعلق ادویات اور مشنری کی درآمد سمیت دیگر بیماریوں میں استعمال ہونے والی ادویات اور غذاؤں پر بھی ٹیکس اور ڈیوٹیز میں چھوٹ دی گئی ہے،تاجر برادری کی سہولت کیلئے شناختی کارڈ کی شرط پچاس ہزار روپے سے بڑھا کر ایک لاکھ تک کر دی گئی،شادی ہالز اور فنکشنز،کوکنگ آئل، کیبل آپریٹر پر عائد ٹیکس ختم،منڈیوں اور کمیشن ایجنٹس پر عائد ٹیکس وصول نہیں کیا جائے گا،پراپرٹی کی آمدن پر گراس نیٹ ٹیکس عائد ہو گا،کپڑوں اور جوتوں کے سٹورز پر عائد سیلز ٹیکس 14 فیصد سے کم کرکے 12 فیصد کردیا گیا ہے،مقامی سطح پر تیار موبائل پر انکم ٹیکس صفر اور سیلز ٹیکس کم کردیا گیا ہے،ٹیکس ادا کرنے والے والدین کے لیے بچوں کی سکول فیس پر ایڈوانس انکم ٹیکس ختم،قرآن پاک کی اشاعت کیلئے درآمدی کاغذ پر بھی ڈیوٹیز ختم کر دی گئی ہیں جبکہ درآمدی سگار،سٹنگز اور دیگر درآمدی مشروبات پر ٹیکسز بڑھایا گیا،لگژری آئٹم،چاکلیٹ پر ڈیوٹیز میں اضافہ کر کے مہنگا کر دیا گیا۔ چیئرپرسن ایف بی آر نوشین جاوید امجد نے ممبر ایف بی آر کے ہمراہ بجٹ پر بریفنگ میں بتایا کہ بجٹ میں عوام اور کاروباری طبقے کو ریلیف فراہم کیا گیا ہے اور مجموعی طور پر 45ارب روپے کی ٹیکس اور ڈیوٹیوں میں چھوٹ دی گئی ہے۔ بجٹ میں،کنسٹرکشن کے شعبہ، سیمنٹ انڈسٹری کیلئے پیکج دیا گیا اور مجموعی طور پر 16 سو23 ٹیرف لائن پر ڈیوٹی میں کمی کی گئی۔ آئندہ بجٹ میں کاروبا آسان بنانا اور ڈاکیومینٹینشن کیلئے اقدامات کیے گئے۔وزارت تجارت، خزانہ اور ٹریڈ باڈیز کی مشاورت سے فنانس بل تیار کیا گیا۔ حامد عتیق سرورنے بتایا کہ پوائنٹ آف سیل میں رجسٹرڈ چین سٹورز کو کرونا وائرس کے باعث سیلز ٹیکس چودہ فیصد سے کم کر کے بارہ فیصد کر دیا گیا۔مقامی سطح پر تیار موبائل 350 ڈالر تک انکم ٹیکس صفر اور سیلز ٹیکس کم کردیا گیا ہے،گوادر سے متعلقہ آرڈیننس فنانس بل کا حصہ بنادیا گیا ہے۔نادرا، بجلی اور گیس کی تقسیم کار کمپنیوں سے ڈیٹا حاصل کیا جائے گا۔سیمنٹ پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کم کرنے سے سیمنٹ کی قیمت بیس سے 25 روپے کم ہوگی،انکم ٹیکس سائیڈ پر 10 ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کر دیئے گئے۔انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کے باعث موجودہ صورتحال برقرار رہی تو ٹیکس ہدف حاصل کرنا مشکل ہو گا،حالات بہتر ہوئے تو ہی بجٹ کا ہدف حاصل ہو سکے گا،موجودہ صورتحال میں ٹیکس ہدف حاصل کرنے کیلئے پھر نئے اقدامات کا سوچا جا سکتا ہے،کرونا وائرس نہ ہوتا تو رواں مالی سال چھیالیس سو ارب کا ٹیکس اکٹھا ہو سکتا تھا۔آئندہ بجٹ میں مجموعی طور پر بیس ارب روپے کا ریلیف دیا گیا۔ایف بی آر میں ای آڈٹ کا سسٹم لارہے ہیں،ای آڈٹ سسٹم سے آڈٹ پر اعتراضات ختم ہوسکیں گے۔ایف اے ٹی ایف کی شرط کے مطابق فلاحی اداروں کی تفصیل لی جائے گی،خیراتی اداروں پر چندے کی تفصیل دینا لازمی ہوگی،فلاحی اداروں کی فنڈنگ کی تفصیلات ایف اے ٹی ایف کی شرط ہے۔ گاڑی کی ڈیپریسیشن پر 25 لاکھ کی حد لیز میں بھی ہوگی۔

چیئرمین ایف بی آر

مزید :

صفحہ آخر -