عالمی تجارت میں پاکستانی برآمدات کا 30فیصد حصہ گھٹنے کے خدشات

عالمی تجارت میں پاکستانی برآمدات کا 30فیصد حصہ گھٹنے کے خدشات

  

کراچی(اکنامک رپورٹر) کورونا وائرس کی وجہ سے پاکستانی برآمدات کا عالمی تجارت میں 30 فیصد حصہ گھٹنے کے خدشات کے پیش نظر غیرروایتی مصنوعات کی برآمدات کا فروغ ضروری ہوگئی ہے۔پاکستانی برآمدات کاعالمی تجارت میں 30 فیصد حصہ کورونا وائرس اور کساد بازی کی وجہ سے گھٹنے کے خدشات کے پیش نظر غیرروایتی مصنوعات کی برآمدات کا فروغ ضروری ہوگئی ہے ان میں ادویات، پھل سبزیاں، مچھلی، فوڈ سپلیمنٹس ودیگر اشیا شامل ہیں جو پاکستان میں باآسانی دستیاب ہیں اور ان غیرروایتی مصنوعات کی دنیا بھر میں طلب بھی بڑھگئی ہے۔کورونا وائرس کی وبا کی موجودہ صورتحال میں کامن ویلتھ انٹرپرئزز اینڈ انویسمنٹ کونسل کے اسٹریٹجک پارٹنراور سی ای او کلب کے دیرینہ شراکتداروں نے پاکستان کی روایتی برآمدات کو درپیش نئے کاروباری چیلنجز اور مارکیٹیں بنانے جسی مشکل ٹاسک پر کام کیا۔ایمپلائرز فیڈریشن آف پاکستان کے صدر اسماعیل ستار نے اس ضمن میں بتایاکہ ای ایف پی ایک ایسا پلیٹ فارم کے قیام پرکام کر رہی ہے کہ جس میں کامن ویلتھ بلاک کے 54 ممالک کے سرکردہ صنعتکاراور خواہش مند کاروباری افراد موجود ہوں اور وہ روزگار پیدا کرنے اور غربت کے خاتمے کے لئے تجارت وسرمایہ کاری میں تعاون کرسکیں۔ انہوں نے بتایا کہ افریقی خطہ میں ٹریلین ڈالرز کی مصنوعات درآمد کرتاہے لیکن اس تجارت میں پاکستان کا کوئی حصہ نہیں ہے، وفاقی حکومت کے دیکھو افریقہ میں کے تحت ایف ایف پی نے افریقی خطے میں درآمد ہونے والی غیرروایتی مصنوعات پر ریسرچ اور شناخت کے لیے ہنرمند نوجوانوں پر مشتمل ایک ٹیم کو متحرک کردیاہے اور جلد ہی افریقی مارکیٹوں کافزیکلی جائزہ لینے اور وہاں پاکستانی مصنوعات ذخائررکھنے کیلییگوداموں کو تلاش کرنیکے سلسلے میں پاکستانی صنعتکاروں کا ایک وفد افریقی خطے کا دورہ بھی کریگا۔

اس حکمت عملی کی کامیابی کی صورت میں ابتدائی دوسال کیلیے افریقی خطے میں 1ارب ڈالر کی غیرروایتی مصنوعات برآمد کرنے کا ہدف طے کیاگیاہے۔انہوں نے بتایا کہ افریقی خطے میں مصالحہ جات، صنعتی لباس، شرجیل آلات، سینیٹائزر، گارمینٹس، چھوٹی مشینری سمیت دیگر مصنوعات برآمد کرنے کی وسیع گنجائش موجود ہے۔

مزید :

کامرس -