حکومت کورونا سے بچاؤ اور لوگوں کی حفاظت کیلئے جدوجہد کر رہی ہے: فضل حکیم

    حکومت کورونا سے بچاؤ اور لوگوں کی حفاظت کیلئے جدوجہد کر رہی ہے: فضل حکیم

  

پشاور (سٹاف رپورٹر)چیئرمین ڈیڈیک سوات فضل حکیم خان یوسفزئی نے ڈبلیو ایس ایس سی کے صفائی کے عملے میں حفاظتی کٹس ودیگر سامان تقسیم کرتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس جیسی خطرناک وائرس سے عوام کو محفوظ رکھنے میں بلا خوف و خطر ڈیوٹیاں سرانجام دینے پر ڈبلیو ایس ایس سی کے ملازمین خراج تحسین کے مستحق ہیں ڈبلیو ایس ایس سی نے حلقہ پی کے 5 میں سب سے پہلے حفاظی اقدامات کا آغاز کیا تمام یونین کونسلوں میں موجود تمام مساجد، سرکاری و نجی دفاتر، ہسپتالوں، سڑکوں و شاہراہوں اورپبلک مقامات کے ساتھ ساتھ تمام گلی کوچوں میں اسپرے مہم کا آغاز کیا ساتھ ہی صفائی ستھرائی کے صورتحال کو ہنگامی بنیادوں پر بہتر بنانے کیلئے کچرے کی بروقت منتقلی اور جراثیم کش ادویات کے چھڑکاؤکے خصوصی انتظامات کئے اور کورونا وائرس کے خاتمہ تک ان تمام اقدامات کو تسلسل سے جاری رکھنے کا عزم کیا ہے انہوں نے کہا کہ مصیبت کی اس گھڑی میں عوام کی خدمت کا مثالی جذبہ اس بات کی علامت ہے کہ ہم بہت جلد اس وباء کو قابو کرنے میں کامیابی حاصل کرلیں گے انہوں نے کہا کہ عوام پریشان نہ ہوں حکومت کورونا وائرس سے بچاؤ کیلئے لوگوں کی حفاظت کیلئے دن رات کام کر رہی ہے ہم آزمائش کے وقت عوام کے ساتھ کھڑے ہیں میرا ہر لمحہ اپنے عوام کو کورونا وباء سے بچانے کیلئے وقف ہے انہوں نے کہا کہ سوات کے عوام کی بے لوث خدمت کررہے ہیں ذاتی مفادات کی سیاست نہ کبھی کی ہے اور نہ کریں گے انہوں نے کہا کہ سرکاری محکموں کے افسران عوام کی فلاح و بہبود اور بہتر صحت کے لئے دن رات کام کریں اور عوام کو تمام ضروری سہولیات ان کی دہلیز پر پہنچائیں انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس قومی مسئلہ ہے اس پر سیاست کرنے والوں کو قوم معاف نہیں کرے گی ہمیں عوام کی مشکلات کا مکمل احساس ہے ضلع سوات میں عوام کی بھرپور مشاورت سے تمام فیصلے کئے جا رہے ہیں عوام کو صحت کی معیاری سہولیات فراہم کرنا اولین ترجیح ہے انہوں نے کہا کہ عوام کی زندگیوں کو محفوظ بھی بنانا ہے اور عام آدمی کے مسائل بھی حل کرنے ہیں عوام کی ذمہ داری ہے کہ وہ ایس او پیز پر عملدرآمد کریں شہری جتنی ذمہ داری کا مظاہرہ کریں گے بہتر ہو گا اس موقع پر ڈبلیو ایس ایس سی کے چیف ایگزیکٹیو شیدا محمد، جنرل منیجر آصف سلیم، سابق تحصیل کونسلر خالد محمود اور دیگر موجود تھے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -