ایبٹ آباد میں 24 گھنٹوں میں کرونا سے 5 افراد جاں بحق

ایبٹ آباد میں 24 گھنٹوں میں کرونا سے 5 افراد جاں بحق

  

ایبٹ آباد(اڈسٹرکٹ رپورٹر) ایبٹ آباد سمیت ہزارہ ڈویژن میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران کرونا وائر س سے پانچ افراد شہید ہو گئے ہیں جبکہ ایبٹ آبادکرونا وائر س سے متاثرہ مریضوں کی تعداد 600سے تجاوز کر گئی ہے اور صرف جمعرات کے روز ایک روز میں ساٹھ افراد میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوئی ہے اور ایبٹ آباد میں اب تک پینتیس افراد کرونا وائرس کے باعث شہید ہو گئے ہیں گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران ایبٹ آباد میں دو نوجوان کرونا وائرس کے باعث شہید ہو گئے ہیں جن میں جھنگی سے تعلق رکھنے والے سید احمد علی شاہ اور سیکرٹری آرٹی اے کے سینئر کلرک محمد آصف حویلیاں گاؤں کے ماسٹر فضل الرحمان کرونا وائرس سے ایبٹ آباد کمپلیکس میں شہید ہو گئے تفصیلات کے مطابق کرونا وائرس سے حویلیاں سرکل میں مسلسل تیسرے دن بھی مریض موت کے منہ چلے گئے ماسٹر فضل الرحمان حویلیاں گاؤں کے معروف شخصیات میں شمار ہوتے ہیں انھیں تین روز قبل ایوب میڈیکل کمپلیکس ایبٹ آباد میں لے جایا گیا اور کرونا اہیسولیشن وارڈ میں رکھا گیا گزشتہ روز انکی طبعیت اچانک خراب ہو گئی اور اسی دوران انکی موت واقع ہوگئی جبکہ مانسہرہ میں بھی دو افراد کرونا وائرس سے شہید ہوئے ہیں ضلع ایبٹ آباد میں اب تک تین ہزار کے قریب افراد کے کرونا وائرس کے ٹیسٹ کروائے گئے ہیں جن میں سے ساڑھے سولہ سو کے قریب افراد کے ٹیسٹ نیگیٹو آئے ہیں اور اب تک چھ چار سو چالیس افراد میں کرونا وائرس موجود ہے ایک سو پینتیس افراد اس وائرس سے صحت یاب ہو گئے ہیں اور گزشتہ چند ماہ کے دوران صرف ضلع ایبٹ آباد میں پینتیس کے قریب افراد جاں بحق ہوئے ہیں جن میں زیادہ تر تعداد میں نوجوان شامل ہیں حکومت کی جانب سے جاری کردہ ایس او پیز پر عمل درآمد نہ کرنے اور لاک ڈاؤن میں نرمی کے باعث کرونا وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے ڈسٹرکٹ ایڈ منسٹریشن، پولیس محکمہ صحت، جی ڈی اے، آر ٹی اے، ٹی ایم اے کے ملازمین میں بھی کرونا وائرس تشخیص ہوا ہے اور اس وائرس کے تیزی سے پھیلنے کے باعث لوگوں میں خوف و ہراس پایا جا رہا ہے اور عوام دوبارہ لاک ڈاؤن کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -