سٹاک مارکیٹ میں مندی کا رجحان

سٹاک مارکیٹ میں مندی کا رجحان

  

کراچی (اکنامک رپورٹر) پاکستان سٹاک ایکس چینج میں جمعہ کو مندی کا رجحان غالب رہا اور سرمایہ کاروں نے وفاقی بجٹ کے پیش نظرسائیڈ لائن رہنے کو ترجیح دی جس کے نتیجے میں کے ایس ای100انڈیکس35ہزار کی نفسیاتی حد سے گرتے ہوئے 517.35پوائنٹس کی کمی سے34611.23پوائنٹس کی سطح پر آگیا اور69.94فی صد کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں کمی ریکارڈ کی گئی جس کی وجہ سے سرمایہ کاروں کو 86ارب 60کروڑ31لاکھ روپے کا نقصان اٹھانا پڑا جبکہ حصص کی لین دین کے لحاظ سے کاروباری حجم بھی جمعرات کی نسبت34.27فیصد کم رہا۔گزشتہ روز کاروباری ہفتے کے آخری روز جمعہ کو ٹریڈنگ کے آغاز سے ہی سرمایہ کاروں کی جانب سے حصص کی فروخت کا رجحان دیکھنے میں آیا جس کے باعث مارکیٹ مندی کی لپیٹ میں آگئی اور ٹریڈنگ کے دوران کے ایس ای100انڈیکس 35ہزار کی نفسیاتی حد سے گرتے ہوئے 34510پوائنٹس کی نچلی سطح پر آگیا،بعد ازاں ریکوری آنے سے مزکورہ حد برقرار نہ رہ سکی لیکن مندی کا رجحان آخر تک غالب رہا ور مارکیٹ کے اختتام پر کے ایس 100انڈیکس 517.35پوائنٹس کی کمی سے34611.23پوائنٹس اور کے ایس ای30انڈیکس 291.44پوائنٹس کی کمی سے15038.83پوائنٹس جبکہ کے ایس ای آل شیئرز انڈیکس 307.24پوائنٹس کی کمی سے24703.29پوائنٹس کی سطح پر آگیا۔گزشتہ روز مجموعی طور پر 336کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا جن میں 77کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ،235میں کمی اور24میں استحکام رہا۔بیشتر کمپنیوں کے شیئرز کی قیمتیں گرنے کے باعث مارکیٹ کی سرمایہ کاری مالیت 66کھرب31ارب95کروڑ41لاکھ روپے سے گھٹ کر65کھرب45ارب35کروڑ10لاکھ روپے ہوگیاجمعہ کو حصص کی لین دین کے لحاظ سے کاروباری حجم 17کروڑ78لاکھ83ہزار شیئرز رہا جو جمعرات کی نسبت 9کروڑ27لاکھ45ہزار شیئرز کم ہے۔

سٹاک مارکیٹ

مزید :

پشاورصفحہ آخر -