گفٹ سکیم کے تحت پاکستان بھجوائی جانیوالی گاڑیوں کیلئے شرائط میں زبردست نرمی، اوورسیز پاکستانیوں کی مشکل حل ہوگئی

گفٹ سکیم کے تحت پاکستان بھجوائی جانیوالی گاڑیوں کیلئے شرائط میں زبردست ...
گفٹ سکیم کے تحت پاکستان بھجوائی جانیوالی گاڑیوں کیلئے شرائط میں زبردست نرمی، اوورسیز پاکستانیوں کی مشکل حل ہوگئی

  

ٹوکیو(ویب ڈیسک)جاپان میں پاکستان کے سفیر امتیاز احمد کی ہدایات کے بعد سفارتخانے میں تعینات کمرشل قونصلر طاہر چیمہ کی کوششوں سے جاپان سے پاکستان گفٹ اسکیم کے تحت بھجوائی جانے والی گاڑیوں کے لیے درکار کاغذات اور شرائط میں زبردست نرمی کردی گئی ہے۔

روزنامہ جنگ کے مطابق سفارتخانہ پاکستان میں تعینات کمرشل قونصلر طاہر چیمہ کا کہنا ہے کہ اس عمل سے نہ صرف اوورسیز پاکستانیوں کو فائدہ پہنچے گا بلکہ حکومت کو بھی ڈیوٹی کی مد میں زرمبادلہ حاصل ہوگا،واضح رہے کہ گفٹ اسکیم سرٹیفیکیٹ کی تیاری کے لیے جاپان میں مقیم پاکستانیوں کو ہفتہ لگ جایا کرتا تھا اور درجنوں کاغذات کی ضرورت ہوا کرتی تھی تاہم سفیر پاکستان امتیاز احمد کی جانب سے کمیونٹی کو درپیش مشکلات کے کے پیش نظر کمرشل قونصلر طاہر چیمہ کو گفٹ اسکیم سرٹیفیکٹ کا عمل آسان تر بنانے کی ہدایات کے بعد طاہر چیمہ نے پاکستان میں وزارت کامرس ، ایف بی آر اور کسٹم حکام سے طویل مذاکرات کے بعد درجنوں میں درکار کاغذات کو صرف پانچ اہم کاغذات کی فراہمی تک محدود کردیا ہے جس کے بعد اب پاکستان گفٹ اسکیم اور دیگر سہولتوں کے تحت گاڑیاں بھجوانے والے اوورسیز پاکستانیوں کو اب اپنا اوریجنل پاسپورٹ ، شناختی کارڈ ، گاڑی کا ایکسپورٹ سرٹیفیکیٹ اورجینل ، بل آف لینڈنگ اور گفٹ انڈرٹیکنگ جمع کرانا ہوگا جس کے بعد ان کاغذات کی جانچ پڑتال کے بعد اوورسیز پاکستانی کو گفٹ اسکیم سرٹیفیکیٹ جاری کردیا جائے گا .

اس حوالے سے سفارتخانہ پاکستان میں تعینات کمرشل قونصلر طاہر چیمہ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سفیر پاکستان امتیاز احمد کی ہدایات کے پیش نظر ہم نے کوشش کی ہے کہ کمیونٹی کو زیادہ سے زیادہ سہولتیں فراہم کرجائیں اور ان کو درپیش مشکلات کا خاتمہ کیا جائے ان ہی میں سے ایک مشکل گفٹ اسکیم سمیت دیگر اسکیموں کے زریعے پاکستان گاڑی بھجوانے کے لیے جو بے جا اور غیر ضروری کاغذات کی فراہمی کی شرائط ختم کرتے ہوئے اب طریقہ کار کو آسان کردیا گیا ہے امید ہے اس عمل سے نہ صرف اوورسیز پاکستانیوں کو فائدہ پہنچے گا بلکہ حکومت کو بھی ڈیوٹی کی مد میں زرمبادلہ حاصل ہوگا۔

مزید :

بین الاقوامی -