ملک کی بڑی مذہبی جماعت نے وفاقی بجٹ کو تباہی کا نسخہ قرار دے دیا 

ملک کی بڑی مذہبی جماعت نے وفاقی بجٹ کو تباہی کا نسخہ قرار دے دیا 
ملک کی بڑی مذہبی جماعت نے وفاقی بجٹ کو تباہی کا نسخہ قرار دے دیا 

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے امیر سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے بجٹ کو عوام دشمن قرار دے کر مسترد کر دیا اور کہا ہے کہ تنخواہوں میں اضافہ مہنگائی کے تناسب سے ہونا چاہیے تھا، مہنگائی، بیروزگاری، کاروباری بدحالی نے تاریخی ریکارڈ قائم کردئیے ہیں، افسوس حکومتی نااہلی کی سزا قوم اور ملک کو مل رہی ہے، یہ بجٹ نہیں تباہی کا نسخہ ہے۔

 مرکز راوی روڈ میں پارٹی کی مجلس عاملہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر علامہ ساجد میر  کا کہنا تھا کہ اشیائے ضروریہ سستی ہونی چاہییں تاکہ عوام کوریلیف ملے، لوڈ شیڈنگ نے عوام کی پریشانیوں میں مزید اضافہ کردیاہے، تین سال میں معیشت کابیڑہ ڈوب چکاہے،مہنگائی اوربیروزگاری میں مزیداضافہ ہورہاہے،حکومت نے اپنی نالائقی کو کوروناکےپیچھےچھپانےکی کوشش کی، موجودہ حکومت کے بجٹ سے ملک کی رہی سہی معاشی سانسیں بھی رک جائیں گی۔

پروفیسرساجدمیر نےکہاکہ اربوں کا تاریخی خسارہ موجودہ حکومت کی کارکردگی ہے،حکومت اپنی ساکھ کھوچکی ہے،  حکومت کورونا کے پیچھے چھپنے کی کوشش کر رہی ہے، موجودہ اقتصادی صورتحال تباہ ہو چکی ہے، ٹیکس فری بجٹ ان کا جھانسا ہے، حکومت نے پاکستان کو آئی ایم ایف کے سامنے گروی رکھ دیا ہے۔اجلاس میں  رانا محمد شفیق خان پسروری نے گزشتہ اجلاس کی رپورٹ پیش کی۔اجلاس میں سینیٹر حافظ عبدالکریم،علامہ حافظ ابتسام الہی ظہیر،حاجی نواز مغل سمیت دیگر ارکان نے شرکت کی

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -