صنم کدہ ہے جہاں لا الٰہ الا اللہ

صنم کدہ ہے جہاں لا الٰہ الا اللہ

حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ نبی کریم ؐ نے فرمایا: کہ ایک بدکار عورت نے اوڑھنی موزہ باندھ کر کنویں سے پانی نکالا اور ایک پیاسا کتا جو زبان نکالے کھڑا تھا، اُسے پلایا، پس وہ عورت اِسی کام کے بدلے میں بخشی گئی‘‘۔ انسان کی بھوک بھڑکائی تو سنگسار ٹھہری، حیوان کی پیاس بجھائی تو مغفرت مل گئی، یہ قدرت کی میزان ہے۔ ایک بزرگ نے طوائف کے اصرار پر اسے اپنے گھر بلایا، کہنے لگے، وضو کر کے نماز پڑھ لو، اس کے بعد تمہاری فرمائش جو تم میری آزمائش کے لئے کر رہے ہو، پوری کر دوں گا، وہ نماز کے لئے کھڑی ہوئی اور یہ سجدے میں گر گئے، خدایا۔۔۔! مَیں اسے تجھ تک لے آیا ہوں، میرا کام ختم ہو گیا اب یہ تیرا کام ہے، کہ اسے اپنا لے یا رد کر دے، دُعا قبول ہوئی، عورت اپنائی گئی، مرد محفوظ رہا۔ یہ بھی اصلاح کا ایک نسخہ ہے، مگر کوئی معالج اسے تجویز کرنے کی جرأت نہیں رکھتا۔

مزید : ایڈیشن 1