پاکستان اور افغانستان کے دو طرفہ تعلقات میں تاریخی دور کا آغاز ہو گیا ،نواز شریف

پاکستان اور افغانستان کے دو طرفہ تعلقات میں تاریخی دور کا آغاز ہو گیا ،نواز ...

 اسلام آباد( آن لائن ،اے این این)وزیراعظم نوازشریف نے کہاہے کہ افغانستان میں قیادت کی تبدیلی کے ساتھ پاکستان اور افغانستان کے دوطرفہ تعلقات میں تاریخی دورکاآغازہوا،دونوں ممالک نے اپنی سرزمین ایکدوسرے کے خلاف استعمال نہ ہونے دینے کاتہیہ کررکھاہے، افغان پناہ گزنیوں سے متعلق عالمی سطح پرتسلیم شدہ حکمت عملی وضع کر ینگے۔ ۔وہ جمعرات کو پناہ گزینوں کے بارے میں افغان وزیرسیدحسین علمی بلخی سے گفتگو کررہے تھے جنہوں نے وزیراعظم ہاؤس اسلام آباد میں نوازشریف سے ملاقات کی۔وزیراعظم نے کہاکہ تمام ممالک کے ساتھ مستحکم اورتعاون پرمبنی تعلقات کاقیام میرے پرامن ہمسائیگی کے نصب العین کاحصہ ہے پاکستان اورافغانستان نے ماضی کی بداعتمادی کوختم کرکے باہمی اعتمادپرمبنی تعلقات آگے بڑھانے پراتفاق کیا ہے ہمار ی توجہ کامحورسیاسی رابطے،سلامتی اورانسداددہشت گردی کے شعبوں میں تعاون ،تجارت اوراقتصادی تعلقات کوفروغ دیناہے۔انہوں نے کہاکہ دہشت گردہمارے مشترکہ دشمن ہیں جن سے نمٹنے کیلئے مشترکہ کوششوں کی ضرورت ہے پاکستان اورافغانستان نے اپنی سرزمین ایک دوسرے کے خلاف استعمال نہ ہونے دینے کاتہیہ کررکھاہے ہم افغانوں کے اپنے طورپرشروع کردہ اوران کی ہی سرپرستی میں ہونے والے امن ومفاہمت کے عمل کی حمایت کرتے ہیں۔پناہ گزینوں کاذکرکرتے ہوئے وزیراعظم نے کہاکہ پاکستان افغان پناہ گزنیوں کے حوالے سے عالمی سطح پرتسلیم شدہ حکمت عملی وضع کرنے کے لئے پرعزم ہے۔نوازشریف نے جلد افغانستان کادورہ کرنے کی خواہش کابھی اظہارکیا۔اس موقع پر افغان وزیرنے گزشتہ سال ہونے والی افغانستان کے بارے میں لندن کانفرنس میں وزیراعظم نوازشریف کے خطاب کاذکرکیاجس میں انہوں نے عالمی برداری پرزوردیاتھاکہ وہ بیرون ملک مقیم افغان پناگزینوں کی واپسی میں افغانستان کی مددکرے ۔انہوں نے افغانستان میں برفانی تودہ گرنے کے واقعہ کے متاثرین کیلئے امداد بھیجنے پرپاکستان کاشکریہ اداکیا۔انہوں نے وزیراعظم کوافغان صدراشرف غنی کی طرف سے نیک خواہشات کاپیغام بھی پہنچایا۔علا وہ از یں وزیراعظم کے زیر صدارت کابینہ کمیٹی برائے توانائی کا اجلاس ہوا۔وزیراعظم نے بجلی کے جاری منصوبے جلد مکمل کرنے اور عملدرآمد یونٹ قائم کرنے کی ہدایت کر دی۔ اور انہو ں نے کہا کہ موسم گرما میں شہروں میں چھ اور دیہی علاقوں میں آٹھ گھنٹے سے زیادہ لوڈشیڈنگ نہ کی جائے۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ پراجیکٹس عمل درآمد یونٹ قائم کیا جائے اور جامشورو پاور پلانٹ کو 2018ء تک مکمل کیا جائے۔ اجلاس میں ایل این جی سے تین ہزار چھ سو میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے منصوبوں پر پیش رفت کا بھی جائزہ لیا گیا۔ وزیراعظم نے ہدایت دی کہ ایل این جی سے بجلی پیدا کرنے کے یہ منصوبے فروری 2017ء تک مکمل کئے جائیں

مزید : صفحہ اول