جماعت اہل سنت کا ملک گیر حفاظت دین تحریک چلانے کا اعلان

جماعت اہل سنت کا ملک گیر حفاظت دین تحریک چلانے کا اعلان

 لاہور(خبر نگار خصوصی)جماعت اہل سُنّت نے ملک گیر’’حفاظت دین تحریک‘‘ چلانے کا اعلان کردیا۔ تمام بڑے شہروں میں حفاظت دین سیمینارز منعقد کئے جائیں گے۔ اگلا سیمینار 18مارچ کو ملتان میں ہوگا۔ درود و سلام پر پابندی ختم نہ ہوئی تو کراچی سے اسلام آباد تک ’’درود و سلام مارچ‘‘ کریں گے۔ اہل سُنّت دہشت گردی کے خاتمے کے لیے پاک فوج کے ساتھ ہیں۔ آپریشن ضرب عضب پاکستان بچانے کا قومی جہاد ہے۔ اہل حق انتہا پسندی اور فرقہ واریت کی مزاحمت جاری رکھیں گے۔قانون ناموس رسالت ؐتبدیل نہیں ہو نے دیں گے۔ کراچی کے آپریشن کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔اس بات کا اعلان جماعت اہل سُنّت کے زیر اہتمام ایوان اقبال میں منعقدہ’’حفاظت دین سیمینار‘‘ میں کیا گیا۔ سیمینار کی صدارت پاکستان مشائخ کونسل کے سربراہ پیر سیّد منور حسین شاہ جماعتی نے کی جبکہ مقررین میں جماعت اہل سنت پاکستان کے مرکزی ناظم اعلیٰ علامہ سیّد ریاض حسین شاہ ، سنی اتحاد کونسل کے چےئرمین صاحبزادہ حامد رضا، صاحبزادہ سیّد حامد سعید کاظمی (سابق وفاقی وزیر)، جسٹس (ر) میاں نذیر اختر، جسٹس (ر) خواجہ محمد شریف، مفتی محمد اقبال چشتی، علامہ احمد علی قصوری، خواجہ غلام قطب الدین فریدی، پیر سیّد محمد حبیب عرفانی، پیر میاں ابوبکر، صاحبزادہ، حمید جان سیفی، پیر میاں محمد حنفی سیفی، صاحبزادہ عبدالمصطفےٰ ہزاروی، پروفیسر عبد العزیز نیازی ،صاحبزادہ محب اللہ نوری، مفتی محمد صدیق ہزاری اور دیگر شامل تھے۔ اس موقع پر جماعت اہل سُنّت پاکستان کے مرکزی ناظم اعلیٰ علامہ سیّد ریاض حسین شاہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ حکومت میلاد والوں کو نہیں فساد والوں کو پکڑے۔ پاکستان کو مولوی ، مدرسہ اور مسجد نہیں سیاستدانوں سے خطرہ ہے۔سنّی اتحاد کونسل کے چےئرمین صاحبزادہ حامد رضا نے کہا کہ پنجاب میں علمائے اہل سنت پولیس گردی کا شکار ہیں۔ سابق وفاقی وزیر صاحبزادہ سیّد حامد سعید کاظمی نے کہا کہ اسلام کو دیس نکالا دینے کی کوششیں کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ لاہور ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس، جسٹس(ر) میاں نذیر اختر نے کہا کہ گستاخیاں بند نہ ہوئیں تو غازی علم الدین شہید پیدا ہوتے رہیں گے۔ غازی ممتاز قادری کو سنائی گئی سزائے موت شریعت اور آئین کے منافی ہے۔ جسٹس (ر) خواجہ محمد شریف نے کہا کہ مسلمان عشق رسول کو اپنا اسلحہ بنائیں ۔ علماء اسلام کا تصور امن اجاگر کریں اور قوم میں امن پسندی کی سوچ پیدا کریں۔پاکستان مشائخ کونسل کے سربراہ اور علی پور شریف کے سجادہ نشین پیر سید منور حسین شاہ جماعتی نے کہا کہ غلبہ اسلام کے لیے وحدت امت کی ضرورت ہے۔جماعت اہل سُنّت پنجاب کے صدر مفتی محمد اقبال چشتی ، تحریک فیضانِ اولیاء کے سربراہ پیر سیّد محمدحبیب عرفانی ،علامہ احمد علی قصوری نے بھی خطاب کیا ۔سیمینار میں منظور کی گئی قراردادوں میں مطالبہ کیا گیا کہ ایمپلی فائر آرڈیننس کی آڑ میں علماء کی پکڑ دھکڑ بند کی جائے اور گرفتار علماء کو رہا کرکے ان پر قائم کئے گئے مقدمات واپس لیے جائیں۔ مساجد سے لاؤڈ سپیکر اتارنے کا سلسلہ بند کیا جائے اور اذان کی آواز کو محدود نہ کیا جائے۔ غازی ممتاز قادری کا مقدمہ شرعی عدالت میں بھیجا جائے۔ صدرمملکت اپنے صدارتی اختیارات استعمال کرتے ہوئے غازی ممتاز قادری کی سزائے موت ختم کریں۔ آپریشن ضرب عضب کا دائرہ ملک بھر میں پھیلایا جائے اور دہشت گردوں کے ہمدردوں اورسہولت کاروں کو بھی پکڑا جائے۔کالعدم تنظیموں کو نام بدل کر کام کرنے سے روکا جائے۔ حفاظت دین تحریک

مزید : صفحہ آخر