بھارت میں سوشل میڈیا حقیقی رشتے ٹوٹنے کا سبب قرار

بھارت میں سوشل میڈیا حقیقی رشتے ٹوٹنے کا سبب قرار
بھارت میں سوشل میڈیا حقیقی رشتے ٹوٹنے کا سبب قرار

  


نئی دہلی (ویب ڈیسک) سوشل میڈیا کی مجازی زندگی حقیقی رشتوں کے مابین تناﺅ میں اضافے اور اعتماد میں کمی کا سبب رہی ہے۔ گزشتہ کچھ عرصے سے سوشل میڈیا اس کی ایک بڑی وجہ بن کر سامنے آیا ہے۔ شریک حیات ہمسفر کو نظر انداز کرکے ٹوئٹر، واٹس ایپ یا فیس بک پر مصروف رہنے کی عادت نے بہت سے جوڑوں کو علیحدگی کی منزل تک پہ نچادیا ہے۔

 ایک رپورٹ کے مطابق بھارت میں سوشل میڈیا کی وجہ سے طلاق کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے اور ایسے واقعات میں دس میں سے چھ کی وجہ واٹس ایپ اور فیس بک کا کسی لت کی صورت میں استعمال ہے۔ فیملی کونسلر شیلا چترویدی کا نے کہا کہ گزشتہ تین مہینوں کے دوران عدالت میں لائے گئے طلاق کے تقریباً 42 کیس ایسے تھے جس میں علیحدگی کا مشترکہ سبب سوشل میڈیا تھا۔ ان میں کچھ ایسے کیس بھی تھے، جن میں میاں بیوی کے پاس سوشل میڈیا کی وجہ سے ایک دوسرے کے لئے وقت نہیں تھا۔ بات چیت نہ ہونے کی وجہ سے کئی معاملے پر غلط فہمیاں پیدا ہوئیں اور نوبت طلاق تک آپہنچی۔ اگرچہ، کونسلنگ کے بعد ایسے کچھ معاملوں کو سلجھالیا گیا۔ تاہم فحش ویڈیو کلپس بنا کر دھمکانے، جنسی ہراساں کرنے کے پیغامات یا فیس بک پر فوٹوگراف وائرل کرنے کی دھمکی دینے کے کچھ مقدمات عدالت میں زیر سماعت ہیں۔

شیلا چترویدی بتاتی ہیں کہ بعض واقعات میں بیوی نے شوہر پر فحش ویڈیو کلپ بنانے کا الزام لگایا۔ وہیں کچھ کیس ایسے بھی ہیں جن میں شوہر کا الزام ہے کہ بیوی کے گھر کی ذمہ داریاں نبھانے کی بجائے نیٹ پر بات چیت میں مصروف رہتی ہے، چنانچہ خاندان میں انتشار پیدا ہورہا ہے جبکہ کچھ واقعات میں بیوی نے شوہر کے ساتھ فون پر کی گئی بات چیت کو ریکارڈ کرکے اپنے دوستوں کو سنانے کا الزام بھی عائد کیا ہے۔ بھارت کے ماہرین نفسیات نے بھی کہا ہے کہ ورچوئل لائف میں زیادہ وقت گزارنے کی وجہ حقیقی رشتوں میں دوریاں بڑھتی جارہی ہیں۔ ملک میں ایسے لوگوں کی تعداد مسلسل بڑھتی جارہی ہے جو گھنٹوں واٹس ایپ، فیس بک سمیت دیگر سوشل نیٹ ورکنگ سائٹس پر اپنا وقت صرف کرتے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی