ریونیو افسروں کو انتقالات پر حتمی حکم تحریر ، واقعاتی روزنامچہ میں اندراج کی ہدایت

ریونیو افسروں کو انتقالات پر حتمی حکم تحریر ، واقعاتی روزنامچہ میں اندراج کی ...

  

 لاہور(عامر بٹ سے)بورڈ آف ریونیو ممبر جوڈیشل 6کی جانب سے صوبائی دارلحکومت لاہور کے ریونیو افسران کو انتقالات پر عبوری حکم نامہ جیسے اعتراضات تحریر کرنے سے منع کر دیا گیا ہے صوبائی دارلحکومت لاہور کے تحصیلداروں کی جانب سے عرصہ دراز سے انتقالات کے اندراج اور وراثت انتقال کے عملدرآمد کروانے کے دوران زمین مالکان کے دستاویزات پر اخباری اشتہار اور زمین مالکان کے وارثان کو علاقے کی معزز 2 شخصیات سمیت پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے اعتراضات لگائے جانے کی پریکٹس جاری ہے اور اس ضمن میں عوام الناس کو پٹوار خانہ جات کے چکر لگواتے ہوئے خوار کئے جانے کی روایت بھی جاری ہے بورڈ آف ریونیو نے ہدایت کی ہے کہ آئندہ تحصیلدار صاحبان انتقالات پر عبوری حکم نامہ نہیں تحریر کیا کریں گے بلکہ مکمل فیصلہ کرتے ہوئے حتمی حکم نامہ انتقالات پر درج کریں اور اس ضمن میں تحصیل کلکٹر کو بھی ہدایات کی گئی ہیں کہ وہ تحصیل سطح پر آنیوالی قانونگوئیوں کے ریونیو افسران کے انتقالات کی باقاعدہ پڑتال بھی کریں اور عبوری حکم نامہ کی تحریر کے حوالے سے عائد کی جانیو الی پابندی پر بھی سختی سے عمل درآمد کروائیں گے اس کے علاوہ انسپکیشن میں مزید انکشاف کیا گیا ہے کہ صوبائی دارلحکومت لاہو رمیں تعینات پٹواری انتقالات کے اندراج کے بعد روزنامچہ واقعاتی میں اندراج کے عمل کو جان بوجھ کر یقینی نہیں بنا رہا اور تاخیری حربوں سے اپنے مذموم مقاصد پورا کرنے کے لئے عوام الناس کو پریشان کیا جا رہا ہے بورڈ آف ریونیو کے قوانین کے مطابق پٹواری حلقہ اگر انتقال درج کرنے کے بعد روزنامچہ واقعاتی میں اس جائیداد کا اندراج فوری کرتا ہے تو 15 دن کے اندر اس انتقال کو پاس کرنے کا ریونیو افسر بھی پابند ہو جاتا ہے اس کے علاوہ پٹواریوں کی جانب سے اس پریکٹس کو جاری رکھنے میں مزید مقاصد بھی سامنے آئے ہیں جن کے مطابق ایسی جائیدادیں جن کے تنازعہ چل رہا ہوتا ہے اور اس میں زمین مالکان کا انتقال درج تو کر دیا جاتا ہے مگر روزنامچہ واقعاتی میں جان بوجھ کر اندراج نہیں کیا جاتا اور بعد ازاں مخالف پارٹی سے ساز باز کرتے ہوئے حکم امتناعی بھی درج کروا دیا جاتا ہے جس سے انتقال درج کروانے والے شہری کو شدید مشکالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے بورڈ آف ریونیو کے اس قانون پر عمل درآمد نہ کرنے کے عمل کو پٹواریوں نے روٹین قرار دے دیا ہے ان کے مطابق روزنامچہ واقعاتی میں جائیدادوں کے اندراج کا عمل کوئی بڑی بات نہ ہے دوسری جانب بورڈ آف ریونیو انسپکشن ٹیم نے تمام تحصیل کلکٹروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ پٹواریوں سے درج شدہ انتقالات کا اندراج روزنامچہ واقعاتی میں فوری کروائیں تا کہ عوام الناس ان کے تاخیری حربوں سے بچ سکیں اور اس کام کے دوران پٹواری کے دیگر مذموم مقاصد کا خاتمہ بھی کیا جا سکے ،اس طرح صوبائی دارلحکومت میں انتقالات کی مد میں وصول کی جانے والی رقوم خورد برد کئے جانے کے انکشاف پر بورڈ آف ریونیو نے تمام پٹواریوں کو انتقالات کے درج کرنے سے قبل وصول کی جانے والی رقوم اسٹیٹ بنک میں جمع کروانے کی ہدایت کر دی ہے بورڈ آف ریونیو کی جانب سے آنیوالی انسپکشن ٹیم نے ریونیو ریکارڈ میں درج کئے جانے والے انتقالات کو مدنظر رکھتے ہوئے جب ان انتقالات کی مد میں وصول کی جانے والی رقوم کا آڈٹ کیا تو معلوم کہ ہزاروں انتقالات کی فیسیں پٹواریوں نے سرکاری خزانے میں جمع ہی نہیں کروائی ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -