حکومت کی منظوری سے پاکستان میں سی آئی اے اہلکاروں کو سہولتیں فراہم کیں : حسین حقانی

حکومت کی منظوری سے پاکستان میں سی آئی اے اہلکاروں کو سہولتیں فراہم کیں : حسین ...

  

 واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک )امریکہ میں پاکستان کے سابق سفارتکار حسین حقانی نے اعتراف کیا ہے کہ حکومت کی منظوری سے سی آئی اے کے اہلکاروں کی مدد کی۔واضح رہے کہ 2008سے 2011تک امریکہ میں پاکستانی سفیر کے طور پر خدمات سر انجام دینے والے حسین حقانی کو میمو گیٹ سکینڈل منظر عام پر آنے کے بعد معزول کیا گیا تھا۔امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ میں لکھے گئے آرٹیکل میں انہوں نے کہا کہ سکیورٹی اسٹیبلشمنٹ کو مجھ سے شکایات تھیں اور مجھ پر الزام عائد کیا گیا تھا کہ میں نے سی آئی اے کے اہلکاروں کی پاکستان میں مدد کی جنہوں نے پاک فوج کے علم میں لائے بغیر اسامہ بن لادن کا پتہ چلا یا۔ انہوں نے کہا کہ میں پاکستان کی سویلین حکومت کے ما تحت کام کر رہا تھا پھر بھی اسٹیبلشمنٹ کو مجھ سے شکا یات تھیں۔ان کا کہنا تھا کہ میں نے اپنے دور میں امریکہ کیساتھ تعلقات کو بہتر کرنے کیلئے کام کیا قریبی تعلقات کے بعد پاک فوج اور پاکستان کی خفیہ ایجنسی کے بغیر امریکہ نے پاکستان میں اسامہ بن لادن کی کھوج لگا لی۔حسین حقانی نے کہا کہ میں نے پاکستان کی سویلین حکومت سے درخواست کی کہ سی آئی اے کو اسلام آباد میں ٹھکانہ دیا جائے جس کی منظوری کے بعد سی آئی اے کے اہلکاروں کی مدد کی ۔انہوں نے کہا کہ اس وقت کے امریکی صدر اوبامانے افغان جنگ میں کردار ادا کرنے کیلئے پاکستان کی سویلین حکومت کو ساتھ لیکر چلنے کی بات کی تھی ،اس حوالے سے اسلام آباد میں اپنے حکمران سے بات کی جس کے بعد اوباماانتظامیہ سے تعلقات کو بہتر کیا گیا۔اس کے بعد طالبان کو شکست دینے کیلئے اوبامہ انتظامیہ نے پاکستان کی امداد میں بھی ریکارڈ اضافہ کیا ۔

حسین حقانی

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک )پیپلز پارٹی کی رہنما اور امریکہ میں پاکستان کی سابق سفیر شیریں رحمان نے حسین حقانی کے دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہاہے کہ ہم نے ایسا کوئی معاہدہ نہیں کیا جس سے پاکستان کے مفادات متاثر ہوں،ہوسکتا ہے وہاں حسین حقانی پر یہ سب لکھنے کیلئے دباؤ ہو۔نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے شیریں رحمان کا کہناتھا کہ جب میں امریکہ میں بطور سفیر تعینات تھی تو میں نے آصف زرداری سے کچھ حساس ویزوں سے متعلق فون پر بات کی اور میں نے اپنے دور میں بہت سے ویزے روک دئیے تھے ۔ان کا کہناتھا کہ شمسی ایئربیس بھی پیپلز پارٹی کے دور میں بند کروائی گئی تھی جبکہ ہمارے دور میں ڈرون حملوں پر بھی احتجاج کیا گیا ۔

شیری رحمن

مزید :

صفحہ اول -