غیر ملکی مالی معاونت سے 22منصوبوں پر کام مکمل ہوا ،سعید غنی

غیر ملکی مالی معاونت سے 22منصوبوں پر کام مکمل ہوا ،سعید غنی

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) سندھ اسمبلی میں پیر کو محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات سے متعلق وقفہ سوالات کے لیے 2014 ء کے ایک سوال کا جواب بھی شامل کر لیا گیا ، جس پر صوبائی وزیر منصوبہ بندی و ترقیات سعید غنی نے کہا کہ یہ بہت پرانا سوال ہے ، اس پر ضمنی سوالات کا فی الوقت جواب دینا مشکل ہو گا ۔ دیگر سوالوں کے جوابات دیتے ہوئے سعید غنی نے بتایا کہ 2008 سے 2013 ء تک مختلف عالمی مالیاتی اداروں اور غیر ملکی حکومتوں کی مالی معاونت سے سندھ میں 22 پروگرامز / منصوبے چلتے رہے ۔ یہ مالی معاونت نرم قرضے کی صورت میں تھی ۔ ان میں ایشیائی ترقیاتی بینک کے 11 ، عالمی بینک کے 5 ، امریکی ادارہ برائے عالمی ترقی ( یو ایس ایڈ ) کے 2 ، جاپان انٹرنیشنل کوآپریشن ایجنسی ( جائیکا ) اور حکومت جاپان کے ایک ایک اور چین کی حکومت کے 2 منصوبے شامل ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ 2013 ء میں عالمی مالیاتی اداروں کے قرضے اور گرانٹس سے سندھ میں 18 ترقیاتی منصوبوں پر کام ہوا ۔ سعید غنی نے بتایا کہ مالی سال 2012-13 کے بجٹ میں 1323 نئی ترقیاتی اسکیمیں شامل کی گئی تھیں ۔ ان میں سے 916 اسکیموں کو شروع کیا جا سکا ۔ باقی 400 اسکیموں پر عمل درآمد نہیں ہو سکا ۔ محکمہ انفارمیشن ٹیکنالوجی سے متعلق ایک سوال کے تحریری جواب میں وزیر اعلی سندھ کی طرف سے بتایا گیا کہ مالی سال 2015-16 ء کے دوران محکمہ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے 11 منصوبے مکمل کیے گئے ، ان پر 25 کروڑ 40 لاکھ روپے لاگت آئی ۔

مزید :

علاقائی -