سنگاپور سے شمالی کوریا کو غیر قانونی طور پر لگژری اشیا کی فروخت کا انکشا ف 

سنگاپور سے شمالی کوریا کو غیر قانونی طور پر لگژری اشیا کی فروخت کا انکشا ف 
سنگاپور سے شمالی کوریا کو غیر قانونی طور پر لگژری اشیا کی فروخت کا انکشا ف 

نیو یارک (آن لائن) اقوام متحدہ کی افشاں ہونے والی رپورٹ کے مسودے میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ سنگاپور کی کمپنیوں نے اقوام متحدہ کی پابندیوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شمالی کوریا کو پر تعیش فروخت کی ہیں۔

غیرملکی میڈیا کے مطابق سنگاپور کی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ پابندیوں سے آگاہ ہیں اور انھوں نے ان اطلاعات کی تصدیق کے لیے تحقیقات شروع کر دی ہیں۔اقوام متحدہ اور سنگاپور دونوں نے شمالی کوریا کو پر تعیش اشیا کی فروخت پر پابندی عائد کر رکھی ہے۔اقوام متحدہ کی افشاں ہونے والی رپورٹ میں سنگاپور سے کاروبار کرنے والے 2 کمپنیوں کے نام ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان کمپنیوں نے جولائی 2017 تک شمالی کوریا کو متعدد پرتعیش اشیا فروخت کی ہیں جن میں وائن اور سپرٹس بھی شامل ہیں۔ 2006 سے اقوام متحدہ نے شمالی کوریا کو پرتعیش اشیا کی فروخت پر پابندی عائد کی تھی اور سنگاپور کے اپنے قانون کے تحت بھی شمالی کوریا کو یہ اشیا فروخت نہیں کی جا سکتی ہیں۔دونوں کمپنیوں او سی این اور ٹی سپیشلسٹ نے اپنے پر عائد الزامات کو مسترد کیا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سال 2011 سے 2014 کے درمیان 20 لاکھ ڈالر' مالیت اشیا شمالی کوریا کو فروخت کی گئیں ہیں، یہ رقم شمالی کوریا کے بینک ڈیڈونگ کریڈٹ بینک سے کمپنی کے سنگاپور کے اکاؤنٹس میں منتقل ہوئی ہے حکومت کا کہنا ہے کہ سنگاپور نے اپنے مالیاتی اداروں پر شمالی کوریا سے تجارتی لین دین میں معاونت کرنے پر پابندی عائد کر رکھی ہے۔واضح رہے کہ گذشتہ2 برسوس کے دوران پیانگ یانگ کی جانب سے میزائل اور جوہری تجربوں کے بعد عالمی دنیا نے شمالی کوریا پر سخت پابندیاں عائد کی ہیں۔دوسری جانب غیر متوقع طور پر شمالی کوریا کے رہنما کم جانگ ان اور امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مابین مذاکرات آئندہ سال مئی میں ہو رہے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...