غریب عوام کے مہنگے شوق

  غریب عوام کے مہنگے شوق

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


  ہماری خواتین ماشاء اللہ کافی با شعور ہو چکی ہیں، سستی چیز اور شوہر دونوں پر بھروسہ نہیں کرتیں۔ اُنہیں روٹی پکانے کو کہا جائے تو روٹی کھانے کے بعد پنیر کی فرمائش ضرور کرتی ہیں۔ اللہ اللہ کیا سہانے دن تھے جب شوہر کو رومال پر پھول کاڑھ کے دیا کرتی تھیں، اون سلائیاں پکڑے آس پڑوس میں شادی بھی بھگتا آتی تھیں، اب فارغ بیٹھے خود پھول کر کپا ہو جاتی ہیں لیکن پھول کاڑھتی ہیں نہ سلائیاں پکڑتی ہیں نہ کچھ اور کام کرنا پسند کرتی ہیں، اُنہیں سب کچھ اب ریڈی میڈ چاہیئے، اب خاتون نے شادی میں جانا ہو تو بھگتنا شوہر کو پڑتا ہے، ہر صورت میں مہنگی بوتیک کا سوٹ چاہئے، سستے پہ تو نظر بھی نہیں رکھتیں۔ خواتین جب تک گھریلو دستکاری میں ماہر تھیں شوہر حضرات کی موجیں تھیں، ہر شے سمجھیں کہ  مفت ہوتی تھی، پھر شوہر کا سکون اور مفت کی چیزیں بری لگنے لگیں۔عالم یہ ہے کہ سب کچھ مشین میں جھونک کر برینڈز کی مہنگی اور ”ہینڈ میڈ“مصنوعات متوجہ کرتی ہیں اور اُنہیں یہ ہرصورت خریدنی ہیں، اس کے لئے چاہے گھر میں مہینوں لڑائی ڈالے رکھیں۔ جب تک سلک، جارجٹ کے سوٹ پہ خود کڑھائی کرتی تھیں تو اس سوٹ کو اِدھر اُدھر پھینک دیتی تھی۔ ہمسائے کو پہننے کو دیتیں تو واپس لینا بھول جاتیں، لیکن جب سے برینڈز نے ”ہینڈ میڈ“ متعارف کروایا ہے، اس کے پیچھے دیوانی ہوئی پھرتی ہیں، سادہ شیفون کا سوٹ جس کے گلے پر باریک سی ہاتھ کی کڑھائی ہوئی ہو، خرید لیں تو کسی کو پہننے کے لئے نہیں دیتیں، خود بھی صرف ہمسائے کا دل جلانے کے لئے پہنتی ہیں کہ دیکھو بیس ہزار کا لیا ہے۔


گوجرانوالہ میں بنے برتن تو نظر ہی میں نہیں سماتے، اچھا ڈنر سیٹ اگر سستے داموں مل جائے تو اس کی کوالٹی پر شبہ ہی نہیں یقین ہوتا ہے کہ یہ ٹوٹے ہی ٹوٹے، وہ برتن جس پر میڈ اِن پاکستان درج ہے وہ برتن بھلے عمر بھر ساتھ نبھادیں لیکن دو سال کے بچوں کو ڈھول بجانے کے لئے تھما دیتی ہیں۔ ڈھم ڈھما ڈھم۔ اس دوران اگر پلیٹ ٹوٹ جائے تو پلیٹ غیر معیاری تھی، جبکہ ویسا ہی ڈنر سیٹ اگر کسی اونچی دکان سے مہنگے داموں خریدلیں تو اسے سنبھال سنبھال کر استعمال کیا جاتا ہے۔ چیچہ وطنی کے بنے کچے گھڑے اتنی جلدی نہیں ٹوٹتے جتنی جلدی فرانس سے آئے کانچ کے گلاس لیکن اس پر چونکہ دوسرے ملک کی مہر لگی ہے اس لئے کچھ بھی کہنا بیکار ہے۔ قیمت میں انتہائی سستی فیصل آبادی کاٹن کی بیڈ شیٹ سالوں بچھانے پر بھی خراب نہیں ہوتی لیکن اس کی تعریف ہوگی نہ احتیاط۔ سالوں ساتھ نبھانے والی دھل دھل کر ادھ موئی ہوئی اس بیڈ شیٹ کے بارے میں جو حقیرانہ الفاظ استعمال کئے جائیں گے اس پر تو بیڈ شیٹ کو بھی رونا آجاتا ہوگا کہ اتنی ناقدری، آخر کیوں تھی ایسی میری قسمت؟ پلش منک کا قیمتی بیڈ سیٹ قوت خرید سے باہر ہے لیکن خریدنا ضرور ہے۔  میرے ایک عزیز کا استری بنانے کا کارخانہ ہے۔ میں نے اُدھر سے استری خرید کر کسی کو شادی میں گفٹ کی تو استری دیکھ کر اُن کا منہ ہی بن گیا۔ اگلے ہی دن وہ استری مجھے واپس بھیج دی گئی کہ ہم ایسی گھٹیا اور غیر معیاری چیزیں استعمال نہیں کرتے، حالانکہ یہ وہ استری تھی جو سیالکوٹ میں تیار ہوکر ڈبوں میں بند ہونے کے لئے کراچی جاتی ہے اور وہاں سے خود پر غیر ملکی ہونے کی مہر ثبت کروانے کے لئے ملک بدر کی جاتی ہے، پھر کسی بدھو کی طرح لوٹ کے جب واپس گھر کو آتی ہے تو پندرہ سو میں پڑنے والی اسی استری کی قدرو قیمت میں بے انتہا اضافہ ہوچکا ہوتا ہے اِس لئے کہ اب اُس پر میڈ ان۔۔۔۔۔۔ لکھ دیا گیا ہے۔


 ”امپورٹڈ مال کی کوئی گارنٹی نہیں“ ہر دکاندار نے لکھا ہوا ہے لیکن مارکیٹ میں نام تو بہر حال امپورٹڈ کا ہی چلتا  اور دل کو تسلی بھی ہوتی ہے کہ یہ امپورٹڈ ہے، امپورٹڈ اور برینڈڈ یہ دو لفظ ہماری سادگی کو کھا گئے ہیں، ان دونوں کا جنون ایسا سوار ہوا ہے کہ اُن کے علاوہ کچھ قبول ہی نہیں، دیسی کھانے، دیسی چیزیں ہوں یا دیسی انسان لوگ ان سب سے بدکنے لگے ہیں۔ دیسی، غریب لوگ بدیسی اور مہنگی چیزوں کی خواہش رکھتے ہیں، اور اسی طرف لپکتے ہیں، دیسی چیز کہیں زیادہ اچھی اور سستی ہوتی ہے لیکن کچھ بھی ہو میڈ ان پاکستان نامنظور ہے، اپنوں اور اپنوں کی بنائی سستی پڑنے والی مصنوعات پر اعتبار نہیں رہا۔ دہشت گرد سمجھ کر صنعت سازی کو ملک سے ختم کیا جارہا ہے، جب اپنی بنائی مصنوعات خود کو گوارا نہیں، تو عالمی منڈی کیونکر قبول کرے گی؟ اپنی بنائی مصنوعات کی بے توقیری پہ کیا رونا یہاں تو اپنا پیسہ بھی قبول نہیں، وہ بھی ”امپورٹڈ“ چاہئے۔، پبلک ٹرانسپورٹ میں سفر غربت کی نشانی سمجھا جاتا ہے، ہر شخص ذاتی گاڑی کو ترجیح دیتا ہے۔ پٹرول مہنگا ہونے کے باوجود غریب بھی سائیکل چلانا شان کے خلاف سمجھتا ہے۔ غبارے بیچ کر گذارہ کرنے والا بھی موٹر سائیکل کے بغیر کام پر نہیں جاتا، عوام غربت میں اور ملک قرضوں میں ڈوبا ہے لیکن اللہ کے فضل اور ”خیرخواہوں“ کے تعاون سے شاہ خرچیاں سب کی قائم ہیں۔ کیا ہے کہ غریب ملک کے رہنے والوں کے شوق خاصے مہنگے ہیں،مہنگے قرضوں کے بل بوتے پر چلنے والی اس قوم کی عزت چاہے دنیا میں دو کوڑی کی نہ رہے لیکن ظاہری نمود و نمائش کسی کوچھوڑنا گوارا نہیں۔

مزید :

رائے -کالم -