ماہ رمضان کا مقصد دوسروں کے دکھ سکھ کا خیال کرنا ہے, خان زمان

ماہ رمضان کا مقصد دوسروں کے دکھ سکھ کا خیال کرنا ہے, خان زمان
ماہ رمضان کا مقصد دوسروں کے دکھ سکھ کا خیال کرنا ہے, خان زمان

  

دبئی (طاہر منیر طاہر) ماہ رمضان خدمت خلق کے ذریعے قریب الہٰی کا باعث ہے۔ ہمیں چاہیے کہ ہم اس ماہ مقدس میں ایک دوسرے کا خیال رکھیں اور ایک دوسرے کے دکھ سکھ میں شامل ہوں۔ ان خیالات کا اظہا الابراہیمی پیلس ریسٹورنٹ کے مالک خان زمان نے اپنی طرف سے مقامی صحافیوں کے اعزاز میں دئیے گئے افطار ڈنر سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ امارات میں مقیم پاکستانی صحافیوں سہیل خاور، اشفاق احمد، عبدالرحمن رضا، خالد محمود گوندل، طارق ندیم، حافظ زاہد علی، عابد قریشی، زمرد بونیری، خالد ملک، ارشد انجم، سبط عارف، رانا محمد ارشد، عارف شاہد، رضا عابدی، ملک وحید بابر، رانا محمد رضوان، حافظ عبدالرﺅف سجاد خان، عمران یوسفزئی، عنایت الرحمن، محمد شاہد، راجہ اسد خالد اور راجہ عرفان احمد جبکہ امارات میں دیگر پاکستانیوں حاجی محمد یٰسین، خالد حسین چودھری، راجہ محمد سرفراز، خواجہ عبدالوحید پال، ملک شہزاد یونس، سفیر احمد ستی، راﺅ اکبر اور مخدوم شوکت قریشی نے شرکت کی۔

پاکستانی کمیونٹی کے اعزاز میں یہ پہلا افطار ڈنر تھا جس میں صحافیوں اور دوسرے لوگوں نے شرکت کی۔ اس موقع پر خان زمان سرور نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ماہ رمضان خوشیوں، رحمتوں اور برکتوں والا مہینہ ہے ہم سب کو اس ماہ مقدس میں اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنا چاہیے اور دکھی انسانیت کی خدمت کرنی چاہیے۔ خان زمان سرور نے کہا کہ روزہ صرف بھوک اور پیاس برداشت کرنے کا نام نہیں بلکہ دوسروں کے احساسات اور جذبات کا خیال رکھنے کا نام ہے۔ اس ماہ مقدس میں ہمیں دکھی انسانیت کی خدمت کرنی چاہیے اور غریبوں ناداروں کا خیال رکھنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ عبادات کے ساتھ ساتھ خلق خدا کی خدمت بھی کرنی چاہیے تاکہ قرب الہٰی حاصل ہو کیونکہ اللہ کو محبوب وہ ہوگا جو اس کے بندوں کے ساتھ پیار اور خوش خلقی سے پیش آئے گا۔

خان زمان سرور نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کو بھی ایک پلیٹ فارم پر اکٹھا ہونا چاہیے اور پاکستانیوں کی خدمت کے لئے اپنے حصہ کی شمع روشن کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ یو اے ای کے حکمران پاکستان کے عوام سے بے حد لگاﺅ رکھتے ہیں لہٰذا ہمیں بھی چاہیے کہ ہم بھی یو اے ای کی مزید تعمیر و ترقی میں حصہ لیں اور دونوں ممالک کے درمیان خوشگوار تعلقات کا ذریعہ بنیں، اس موقع پر اتحاد بین المسلمین اور یو اے ای کے حکمرانوں کے لئے دعائے خیر بھی کی گئی۔

مزید : عرب دنیا