غازی آباد پولیس کے مبینہ تشدد سے نوجوان کی ٹانگ ٹوٹ گئی

  غازی آباد پولیس کے مبینہ تشدد سے نوجوان کی ٹانگ ٹوٹ گئی

  

لاہور(کرائم رپورٹر)پنجاب پولیس سرکاری اداروں میں 227مریضوں کے ساتھ کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والاادارہ بن گیا۔ لاہور سمیت پنجاب بھرمیں صحت یاب ہونے والے 58ملازمین دوبارہ ڈیوٹیوں پر پہنچ گئے۔تفصیلات کے مطابق ملک بھر میں کورونا وائرس کیخلاف دیگر متعلقہ اداروں کی طرح پولیس بھی فرنٹ لائن پرفرائض سرانجام دے رہی ہے اورکورونا وائرس کی روک تھام کے لیے قرنطینہ سنٹرز۔ہسپتال۔ناکوں اور مارکیٹوں میں موجود ہے۔دوران ڈیوٹی اب تک 85سو کے قریب ملازمین کے ٹیسٹ کروائے گئے ہیں 4ہزار سے زائد کے رزلٹ منفی جبکہ 4100کے رزلٹ متوقع ہیں۔اب تک کی رپورٹس میں 285ملازمین میں کورونا وائرس مثبت آیا ہے جس میں 227زیر علاج جبکہ 58صحت یاب ہوکر دوبارہ ڈیوٹیوں پر پہنچ چکے ہیں۔ کورونا وائرس کیشکار پہلے پولیس ملازم سمیع اللہ کا کہنا ہے کہ وہ 27دن زیرعلاج رہا اور وہاں پر متعلقہ ملازمین و افسران نے بہت ساتھ دیاجبکہ صحتیاب ہونے کے بعد افسران نے چھٹی کے لیے کہا لیکن اس نے ڈیوٹی کوترجیح دی ہے۔ اے آئی جی آپریشنز عمران کشورکا کہنا ہے کہ پوری فورس کورونا وائرس کے خلاف کردار ادا کررہی ہے۔ کورونا وائرس کے حوالے سے حساس مقامات پرڈیوٹیاں سرانجام دینے والوں کوحفاظتی سامان بھی مہیا کیا جارہا ہے جبکہ متاثرہ ملازمین کے لیے اضافہ فنڈز بھی جاری کیے جارہے ہیں۔

جہاں پولیس ملازمین وافسران مہلک مرض کی زدمیں آکر متاثر ہورہے لیکن اسکے باوجودفرنٹ لائن پر لڑرہے ہیں اسی طرح عوام کو بھی سماجی فاصلوں کے اقدامات پر عملدرآمدکرکیکورونا وائرس کی روک تھام میں کردارادا کرنا ہوگا۔

مزید :

علاقائی -