اوورسیز پختونوں کیساتھ نارواسلوک، ناانصافی برداشت نہیں، ایمل ولی

اوورسیز پختونوں کیساتھ نارواسلوک، ناانصافی برداشت نہیں، ایمل ولی

  

پشاور(سٹی رپورٹر) اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے خلیجی اور دوسرے ممالک میں پختونوں کے ساتھ ہونیوالے امتیازی سلوک پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ لاکھوں پختون ان ممالک میں روزگار اور کاروبار کے غرض سے مقیم ہیں، ماہانہ اربوں روپے زرمبادلہ کی صورت میں ملک بھیجتے ہیں لیکن کورونا وباء کی وجہ سے روزگار اور کاروبار بند ہونے کی وجہ سے متعلقہ سفارتخانوں میں واپسی کیلئے رجسٹریشن کے باوجود مہنگی ترین فلائیٹ کرایہ وصولی کے ساتھ ساتھ ائر ٹکٹ کے حصول کیلئے سفارش اور در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں۔ باچاخان مرکز پشاور سے جاری بیان میں ایمل ولی خان نے کہا کہ پختونوں کے ساتھ یہ زیادتی اور ناروا سلوک ناقابل برداشت ہے۔ باچاخان ائرپورٹ بند ہے باوجود یہ کہ حکمرانوں کو معلوم ہے کہ پاکستان سے باہر محنت مزدوری کرنیوالے زیادہ تر پشتون ہی ہیں۔ انکی واپسی اپنے ائرپورٹ کی بجائے ملک کے دیگر ائرپورٹس پر کی جارہی ہیں، انہیں پرائیویٹ ہوٹلوں میں قرنطین کیا جارہا ہے جس کا خرچ بھی انہی مسافروں کی جیبوں مہنگے داموں وصول کئے جارہے ہیں۔ ایمل ولی خان نے کہا کہ مرکزی حکومت میں پختون وزراء اور صاحب اقتدار آج اوورسیز پختونوں کے ساتھ ہونیوالی زیادتیوں پر خاموش ہیں۔وزیراعلیٰ کو پتہ ہونا چاہیے کہ لاکھوں پختون باہر ممالک میں ملکی زرمبادلہ اربوں روپے کمانے کا باعث ہیں۔ اے این پی وزارت خارجہ، مرکزی حکومت اور پختون وزیراعلیٰ کے اس رویے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔عوامی نیشنل پارٹی پختونوں کے حقوق کی ترجمان ہے اور ہر فورم پر اوورسیز پختونوں کے مسائل کو اجاگر کرے گی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -