دنیا بھرمیں کتنے ڈاکٹرز اور طبی اہلکار کورونا وائرس کی بھینٹ چڑھے؟ افسوسناک اعدادوشمار جاری

دنیا بھرمیں کتنے ڈاکٹرز اور طبی اہلکار کورونا وائرس کی بھینٹ چڑھے؟ افسوسناک ...
دنیا بھرمیں کتنے ڈاکٹرز اور طبی اہلکار کورونا وائرس کی بھینٹ چڑھے؟ افسوسناک اعدادوشمار جاری

  

قاہرہ(ڈیلی پاکستان آن لائن) کورو نا وائرس نے بیک وقت پوری دنیا میں جنگ چھیڑ رکھی ہے جبکہ اس جنگ میں ان کے خلاف ڈاکٹرز پہلی صف میں کھڑے ہوکر لڑ رہے ہیں۔ موذی وائرس کی وجہ سے دولاکھ نوے ہزار افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں اور ان میں وہ ڈاکٹرز اور طبی عملہ بھی شامل ہے جس نے لوگوں کی جان بچانے کیلیے اپنی جانیں داو پر لگادیں۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق کورونا وائرس کی وجہ سے اب تک  طبی عملے کے 22 ہزار کارکن اس وائرس کا شکار بن چکے ہیں۔

العربیہ کے مطابق عالمی ادارہ صحت کے ریجنل ڈائریکٹر ڈاکٹر احمد بن سالم المنظری نے قاہرہ میں تنظیم کے علاقائی دفتر کرونا کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے انکشاف کیا کہ اب تک پوری دنیا میں طبی عملے کے 22 ہزار کارکن کرونا کا شکار ہوچکے ہیں۔ چین میں کرونا کے پہلے مریض کے سامنے آنے کے 134 دن اور مشرق وسطیٰ میں پہلے مریض کے 105 دن بعد تازہ صورت حال پر بات کرتے ہوئے ڈاکٹر المنظری نے کہا کہ کرونا سے لگ بھگ چار ملین افراد متاثر ہوچکے ہیں۔

المنظری نے بتایا کی پوری دنیا میں صحت کے شعبے کے 50 ملین کارکن کرونا کے خلاف کام کر رہے ہیں۔ ان میں سے تین لاکھ 50 ہزار کارکن مشرق وسطیٰ کے ممالک میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ وقت دنیا کے 52 ممالک میں طبی عملے کے 22 ہزار کارکن کرونا کا شکار ہوچکے ہیں۔ ان میں سے 90فی صد کارکن اسپتالوں اور طبی مراکز میں کرونا کا شکار ہوئے۔مشرق وسطیٰ کے ممالک میں کرونا کے متاثرین میں ایک سے 20 فی صد طبی عملے کے کارکن شامل ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں ڈبلیو ایچ او کے عہدیدار نے کہا کہ جن ممالک نے کرونا کی وجہ سے مکمل لاک ڈائون کیا انہیں حفاظتی تدابیر کے لیے وقت مل گیا اور ساتھ ہی وبا کو مزید پھیلنےسے بھی روک دیا گیا۔

کرونا کی ویکسین کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں اس وقت 100 اقسام کی ویکسین کی تیاری پر کام ہو رہا ہے۔ ان میں سے 8 ویکسین پر تجربات جاری ہیں تاہم فی الحال انہیں عام لوگوں کے لیے استعمال نہیں کیا جا رہا ہے۔

 خیال رہے دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 42 لاکھ سے بڑھ گئی ہے جبکہ دو لاکھ 91 ہزار سے زائد افراد اس سے ہلاک ہو چکے ہیں۔

پاکستان میں متاثرین کی تعداد 34 ہزار سے بڑھ گئی ہے جبکہ 737 افراد اس مرض کی وجہ سے جاں بحق ہوئے ہیں۔ پاکستان میں سب سے زیادہ 267 اموات صوبہ خیبر پختونخوا میں ہوئی ہیں۔

سعودی حکام نے ملک میں وائرس کے پھیلاؤ روکنے کی کوششوں کے سلسلے میں عید کی تعطیلات میں ملک بھر میں پانچ دن 24 گھنٹے کا کرفیو لگانے کا اعلان کیا ہے

امریکہ میں وبائی امراض کے ماہر ڈاکٹر انتھونی فاؤچی کا کہنا ہے کہ کم از کم آٹھ ویکسینز کو ٹیسٹ کیا جا رہا ہے اور اگر ان میں سے ایک بھی کامیاب ہو گئی تو یہ اگلے سال سے پہلے استعمال کے لیے دستیاب ہو گی۔

مزید :

بین الاقوامی -عرب دنیا -کورونا وائرس -