نوشہری کلاں ، کھلی کچہری یں شکایات کے انبار لگ گئے

نوشہری کلاں ، کھلی کچہری یں شکایات کے انبار لگ گئے

  

نوشہرہ ( بیورورپوٹ ) نوشہرہ کلاں کھلی کچہری میں نوشہرہ کلاں کے عوام نے قاضی میڈیکل کمپلیکس ، محکمہ واپڈا ، پبلک ہیلتھ، سوئی گیس ا ور سی اینڈ ڈبلیو حکام کے خلاف شکایات کے انبار لگا دےئے بار بار شکایات کے باوجود متعلقہ محکموں کے افسران تحس سے مس نہیں ہو رہے ہیں قاضی میڈیکل کمپلیکس میں غریب مریضوں کا کوئی پر سان حال نہیں محکمہ پبلک ہیلتھ میں کرپشن عروج پر ہے ضلعی اسمبلی میں بھی پبلک ہیلتھ کے افسران کی لوٹ مار کے خلاف کئی قراردادیں پاس ہوئی لیکن ان کے خلاف کوئی کاروائی نہیں ہوئی محکمہ سوئی گیس کے ناقص انتظامات جن میں کھڈے کھدنے کے باوجود پائپ کی بچھائی کا کام مکمل نہیں کیا گیا جسکی وجہ سے کئی افراد جن بچے بھی شامل ہیں کھڈوں میں گرنے سے زخمی ہوگئے ہیں محکمہ واپڈا کی ناروا اور ظالمانہ لوڈ شیڈنگ اور اور بلنگ کے خلاف عوام نے شدید احتجاج کیا جبکہ نو تعمیر شدہ قاضی میڈیکل کمپلیکس میں مریضوں کو سہولیات فراہم نہ ہونے کہ وجہ سے شدیدمشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے تفصیلات کے مطابق ضلعی کونسلر حاجی نوشیر خان کی رہائشگاہ نوشہرہ کلاں میں ایک عوام کھلی کچہری کا انعقاد کیا گیا کھلی کچہری میں اسسٹنٹ کمشنر جمشید خان ، ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر ڈاکٹر محسن حبیب ، ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر ریونیو عزیز اللہ جان ، وزیر اعلیٰ کمپلنٹ سیل کے چےئرمین حاجی حسین احمد خٹک، ایس ایچ او نوشہرہ کلاں زرداد خان کے سامنے ناظمین جن میں جانس خان ، علی خان ، ضیاء اللہ ، کامران ، ممبر ان طاہر ، شاہد خٹک ، اور معززین علاقہ نے شکایات کرتے ہوئے کہا کہ نوشہرہ کلاں کے مسائل 70سال گزرنے کے باوجود جوں کے توں ہیں جسکی اہم وجہ یہ ہے کہ محکمے اپنے فرائض بہتر انداز میں حل نہیں نبھا رہے ہیں قاضی میڈیکل کمپلیکس جو کہ اس دور جدید کا ایک اہم اور معیاری طبی منصوبہ ہے لیکن قاضی میڈیکل کملیکس کی انتظامیہ اور ڈاکٹروں کی غفلت لاپر وہی اور اپنی ڈیوٹی ایمانداری سے ادا نہ کرنے کی وجہ سے نوشہرہ کلاں اور گرد ونواح کے غریب مریض دور دراز کے ہسپتالوں میں یا نجی کلینکس میں بھاری رقوم خرچ کرکے علاج معالجے پر مجبور ہیں جبکہ قاضی میڈیکل کمپلیکس کی انتظامیہ کی عدم دلچسپی کے باعث ہسپتال کی عمارت رات کے وقت آوارہ کتوں کی آماجگاہ بن جاتا ہے جو کہ افسوس کی بات ہے کھلی کچہری کے شرکا نے مزید کہا کہ محکمہ واپڈا نے تو اور بلنگ اور ناروا و ظالمانہ لوڈ شیڈنگ سے پوری قوم کا جینا دوبھر کر کے رکھ دیا ایک طرف 18/18گھنٹے لوڈشیڈنگ ہوتی ہے تو دوسری طرف بھاری بھر قم بجلی بل بجھوادیتے ہیں یہ کہا کا انصاف ہے کہ بجلی 4گھنٹے استعمال کرو اور بل 24گھنٹے کا ادا کرو اس موقع پر عوام نے محکمہ واپڈا کے خلاف شدید نعرہ بازی کی اور واپڈا کی نجکاری کا بھی مطالبہ کیا شرکا نے مزید کہا کہ محکمہ سوئی گیس والوں نے پورے علاقے میں کھدائی تو کر دی ہے لیکن اس میں پائپ لان نہیں بچھائی جس سے کئی حادثات رونما ہو چکے ہیں لیکن کوئی پر سان حال نہیں ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -