پی ٹی آئی انٹراپارٹی انتخابات ،الیکشن کمیشن نے کالعدم قراردینے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا

پی ٹی آئی انٹراپارٹی انتخابات ،الیکشن کمیشن نے کالعدم قراردینے کی درخواست ...
پی ٹی آئی انٹراپارٹی انتخابات ،الیکشن کمیشن نے کالعدم قراردینے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)الیکشن کمیشن میں پی ٹی آئی انٹراپارٹی انتخابات کےخلاف درخواست پر سماعت ہوئی،چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں بنچ نے درخواست کی سماعت کی،دوران سماعت پی ٹی آئی کے وکیل بابر اعوان اور سینیٹر اعظم سواتی پیش ہوئے،درخواست گزار نے وکیل نے موقف اختیار کیا ہے کہ پی ٹی آئی نے ڈمی انٹراپارٹی انتخابات کرائے اورپارٹی آئین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے انٹرا پارٹی انتخابات کرائے ،وکیل درخواست گزار کا کہناتھا کہ 13 مئی کو پی ٹی آئی کے پارٹی آئین میں ترمیم کی گئی جس کیلئے درست طریقہ کار نہیں اپنایا گیاجبکہ سینٹرل ایگزیکٹو کونسل کی دوتہائی اکثریت سے پارٹی آئین بدلاجاسکتاہے، الیکشن کمیشن سے استدعا ہے کہ پی ٹی آئی کے انٹراپارٹی انتخابات کو کالعدم قراردیا جائے۔

اس پر پی ٹی آئی کے وکیل بابراعوان نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ انٹراپارٹی انتخابات میں ہر چیز شفاف تھی،انٹراپارٹی انتخابات کیخلاف درخواست قابل سماعت ہی نہیںاورانٹراپارٹی انتخابات کوالیکشن پٹیشن کے ذریعے چیلنج نہیں کیاجاسکتااور درخواست گزارکاپی ٹی آئی انٹراپارٹی انتخابات سے کوئی تعلق نہیں،انہوں نے کہا کہ عمران خان نے انٹراپارٹی انتخابات کا سرٹیفکیٹ الیکشن کمیشن میں جمع کرایاہے ،انٹراپارٹی انتخابات نہ کرانے پرانتخابی نشان روک لیاگیاتھا۔

الیکشن کمیشن نے فریقین کے وکلا کے دلائل سننے کے بعددرخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیاجو 28نومبر کو سنایا جائے گا۔

مزید پڑھیں:۔سابق سینیٹر یاسمین شاہ کی بی اے کی ڈگری جعلی قرار،الیکشن کمیشن کا تمام مراعات وصول کرنے کا حکم

مزید :

قومی -اہم خبریں -