ہائی کورٹ نے سموگ پر قابو پانے کے لئے پیشگی اقدامات نہ کرنے پر پنجاب حکومت اور محکمہ ماحولیات کی کارکردگی افسوسناک قرار دے دی

ہائی کورٹ نے سموگ پر قابو پانے کے لئے پیشگی اقدامات نہ کرنے پر پنجاب حکومت ...
ہائی کورٹ نے سموگ پر قابو پانے کے لئے پیشگی اقدامات نہ کرنے پر پنجاب حکومت اور محکمہ ماحولیات کی کارکردگی افسوسناک قرار دے دی

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ مسٹر جسٹس سید منصور علی شاہ نے سموگ پر قابو پانے کے لئے پیشگی اقدامات نہ کرنے پر پنجاب حکومت اور محکمہ ماحولیات کی کارکردگی افسوسناک قرار دے دی.

ویتنام کے ساتھ روایتی دوستی کو نئی بلندیوں تک لے جانا چاہتے ہیں: چینی صدر

فاضل جج نے دوران سماعت مزیدریمارکس دیئے کہ حکومت کی کارکردگی صرف کاغذوں اور اجلاسوں کی حد تک نظر آ رہی ہے۔چیف جسٹس نے شیراز ذکا ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی۔کیس کی سماعت شروع ہوئی تو عدالتی معاون بیرسٹر سارہ بلال نے بتایا کہ پورے صوبہ پنجاب میں اس وقت سموگ نے لوگوں کو مشکل میں ڈال رکھا ہے ،لوگ سموگ کی وجہ سے مختلف بیماریوں کا شکار ہورہے ہیں ، قانون کے تحت سموگ کی وجہ سے پنجاب میں ہیلتھ ایمرجنسی لگانی چاہیے ۔چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ ماحولیاتی آلودگی کے حوالے سے پنجاب حکومت کی کارکردگی صرف کاغذوں اور دستاویزات تک نظر آ رہی ہے،افسوس اس بات کا ہے کہ محکمہ ماحولیات کے پاس سموگ کی پیمائش کا کوئی ریکارڈ ہی نہیں ہے ،ماحولیاتی آلودگی کی وجہ سے لوگوں کی زندگیاں کم ہو رہی ہیں اور پنجاب حکومت سو رہی ہے، حکومت اتنی ایمرجنسی سے کام نہیں کر رہی جتنا اس وقت حالات تقاضا کرتے ہیں،اس وقت سموگ کی وجہ سے عوام کو ہنگامی صورتحال کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے،چیف جسٹس نے مزید ریمارکس دیئے کہ سوشل میڈیا کے مطابق سموگ اور آلودگی میں پاکستان عالمی حد پار کر چکا ہے،آلودگی اس حد تک بڑھنے کے باوجود حکومت کے پاس پیمائش کے اعدادو شمار نہیں ہیں،عدالت نے سموگ کیس کی سماعت 14نومبر تک ملتوی کرتے ہوئے سیکرٹری ماحولیات کو سموگ کی پیمائش کے حالیہ اعداد و شمار سمیت طلب کر لیاہے۔

مزید :

لاہور -