پی ٹی آئی راہنما ڈاکٹر یاسمین راشد نے حلقہ این اے 120کی انتخابی عذداری کیس میں الیکشن ٹریبونل کا دائر اختیار چیلنج کر دیا

پی ٹی آئی راہنما ڈاکٹر یاسمین راشد نے حلقہ این اے 120کی انتخابی عذداری کیس میں ...
پی ٹی آئی راہنما ڈاکٹر یاسمین راشد نے حلقہ این اے 120کی انتخابی عذداری کیس میں الیکشن ٹریبونل کا دائر اختیار چیلنج کر دیا

  

لاہور(نامہ نگار)پاکستان تحریک انصاف کی راہنما ڈاکٹر یاسمین راشد نے حلقہ این اے 120کی انتخابی عذداری کیس میں ٹریبونل کا دائر اختیار چیلنج کر دیا، ٹریبونل کے جج نے مزید دلائل طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 20نومبر تک ملتوی کر دی ہے۔

ویتنام کے ساتھ روایتی دوستی کو نئی بلندیوں تک لے جانا چاہتے ہیں: چینی صدر

حلقہ این اے 120کے ضمنی انتخاب میں ڈاکٹر یاسمین راشد نے انتخابی نتائج الیکشن ٹریبوینل میںانتخابی نتائج کوچلینج کر تے ہوئے اختیار کررکھا ہے کہ حلقہ این اے 120کے ضمنی انتخاب میں 29ہزار 607ووٹوں کی نادرا سے تصدیق نہیں کروائی گئی،درخواست میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ این اے 120 کے ضمنی انتخاب میں وفات پانے والے ووٹرز کے بھی ووٹ کاسٹ کئے گئے ہیں ،لہذادرخواست کے حتمی فیصلے تک حلقہ این اے 120سے بیگم کلثوم نواز کی کامیابی کا نوٹیفیکیشن معطل کیا جائے، الیکشن ٹربیونل کے جج ڈسٹرکٹ سیشن جج ریٹائرڈ شاہد رفیق نے کیس کی سماعت شروع کی تو یاسمین راشد کے وکیل انیس علی ہاشمی نے ٹربیونل کا دائرہ اختیار چیلنج کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ نئے الیکشن ایکٹ کے تحت سیشن جج درخواست کی سماعت نہیں کر سکتا بلکہ انتخابی عذرداری کی سماعت کا اختیار ہائیکورٹ کے ریٹائرڈ یا حاضر سروس جسٹس کو دیا گیا ہے، الیکشن ٹربیونل نے ڈاکٹر یاسمین راشد کے وکیل کو دائرہ اختیار پر مزید دلائل کے لئے 20نومبر کوطلب کر لیاہے۔

مزید :

لاہور -