غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز، ڈی آئی جی آپریشنز کوجواب سمیت عدالت میں پیش ہونیکاحکم

غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز، ڈی آئی جی آپریشنز کوجواب سمیت عدالت میں پیش ...

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز کو بند نہ کرنے کے خلاف دائردرخواست پر ڈی آئی جی آپریشنز کو حکم دیاہے کہ وہ 27نومبر کو جواب سمیت خود عدالت میں پیش ہوں۔مسٹر جسٹس شاہد مبین نے یہ حکم زوہیب عمران شیخ ایڈووکیٹ کی درخواست پر جاری کیا۔درخواست گزار کی طرف سے موقف اختیار کیا گیاکہ لاہور ہائیکورٹ نے لاہور پولیس کو شہر میں قائم غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز کے خلاف کارروائی کا حکم دیاتھا،کئی ماہ گزرنے کے باوجود پولیس خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے،انہوں نے نشاندہی کی کہ نیشنل ہائی وے اینڈ موٹر وے آرڈیننس کے تحت شہریوں کو ڈرائیونگ سکولز میں تربیت دینا موٹر وے پولیس کی ذمہ داری ہے۔ٹریفک پولیس بھی شہریوں کو ڈرائیونگ کی تربیت دے سکتی ہے لیکن ان دونوں محکموں کی بجائے جگہ جگہ غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز کھلے ہوئے ہیں ،جہاں کم عمر بچوں کو بھی ڈرائیونگ سکھائی جارہی ہے،ڈرائیونگ سکولز کو مجاز اتھارٹی سے این او سی لینا چاہیے،انہوں نے استدعا کی کہ عدالتی فیصلے پر عمل درآمد کراتے ہوئے پولیس کو غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز کے خلاف کارروائی کا حکم دیا جائے ۔فاضل جج نے استفسار کیا کہ عدالت کے پہلے فیصلے پر عمل درآمد کیوں نہیں کیا گیا؟ جس پر درخواست گزار نے بتایا کہ کئی ماہ سے چیف ٹریفک آفیسر، ڈی آئی جی آپریشنز اور سی سی پی او لاہور عملی اقدامات کرنے کی بجائے ایک دوسرے کو صرف لیٹرز لکھنے میں مصروف ہیں جس پر عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ڈی آئی جی آپریشنز لاہور کو 27 نومبر کو جواب سمیت ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا حکم دے دیا۔

غیرقانونی ڈرائیونگ سکولز

مزید :

علاقائی -