کراچی ،زہر خورانی سے جاں بحق بچوں کی پوسٹمارٹم رپورٹ محفوظ کر لی گئی

کراچی ،زہر خورانی سے جاں بحق بچوں کی پوسٹمارٹم رپورٹ محفوظ کر لی گئی

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)کراچی کے علاقے ڈیفنس میں مبینہ طور پر مضر صحت کھانا کھا کر جاں بحق ہونے والے دو بچوں کا پوسٹ مارٹم کرلیا گیا اور رپورٹ محفوظ کرلی گئی۔ایم ایل او جناح اسپتال ڈاکٹر شیراز کے مطابق بچوں کی موت کی وجہ بظاہر زہر خورانی لگتی ہے، دونوں بچوں کے جسم سے مختلف اجزا اور خون کے نمونے حاصل کر کے لیباریٹری بھجوا دیئے ہیں، رپورٹ آنے میں 5 سے 10 روز لگیں گے جس کے بعد حتمی وجہ سامنے آسکے گی۔ایم ایل او جناح اسپتال ڈاکٹر شیراز نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ دونوں بچوں احمد اور محمد کا پوسٹ مارٹم کیا گیا ہے، بچوں کے خون اور جسم کے مختلف اعضا سے نمونے حاصل کرکے کیمیائی تجزیے کے لیے بھجوا دیئے گئے ہیں۔ایم ایل او نے بتایا کہ بظاہر بچوں کی موت فوڈ پوائزننگ کا نتیجہ ہے لیکن حتمی وجہ کیمیائی تجزیے کے بعد سامنے آئے گی۔ڈیڑھ سال کے احمد، 5سال کے محمد اور ان کی والدہ عائشہ نے ہفتے کی شب زمزمہ کے ریسٹورنٹ میں کھانا کھایا تھا اور اس سے پہلے ڈیفنس فیز فور میں پلے لینڈ میں ٹافیاں خریدی تھیں، صبح 6 بجے تینوں کی حالت بگڑ گئی۔حالت بگڑنے کے بعد دونوں معصوم بچے جاں بحق ہوگئے جبکہ ان کی والدہ اسپتال میں زیر علاج ہیں، واقعے کی تحقیقات کے لیے ایس ایس پی ساوتھ پیر محمد شاہ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی گئی ہے جس میں ایس ایس پی طارق دھاریجو اور اے ایس پی کلفٹن بھی شامل ہیں۔تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ متاثرہ فیملی کو گزشتہ صبح خاتون کے ماموں اور دیور اسپتال لے کر آئے تھے، خاتون کے شوہر کا لاہور میں کنسٹرکشن کا کام ہے، تفتیشی ٹیم نے متاثرہ خاندان کے گھرکا بھی معائنہ کیا۔حکام کا کہنا ہے کہ گھر میں بھی کھانے کی کئی چیزیں موجود تھیں جن کے نمونے لے لیے گئے ہیں، متاثرہ خاتون کے شوہر، ماموں اور دیور سمیت گھر میں موجود تمام 5افراد کے بیانات بھی لے لیے گئے ہیں۔واقعے کے بعد سندھ فوڈ اتھارٹی بھی متحرک ہوگئی اور عملے نے ریسٹورنٹ کا دورہ کرکے کھانے کے نمونے حاصل کر لیے، حکام کے مطابق ریسٹورنٹ اور پلے لینڈ کو سیل کردیا گیا ہے۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -