انجینئرنگ یونیورسٹی پشاور میں "پاک چائنہ روبوٹکس اینڈ آٹو میشن ریسرچ لیب"کا قیام

    انجینئرنگ یونیورسٹی پشاور میں "پاک چائنہ روبوٹکس اینڈ آٹو میشن ریسرچ ...

  



پشاور(سٹی رپورٹر)انجینئرنگ یونیورسٹی پشاور میں شینگ ڈانگ اکیڈمی آف سائنسز چین کے تعاون سے "پاک چائنہ روبوٹکس اینڈ آٹومیشن لیب"انجینئرنگ نیورسٹی کے شعبہ میکاٹرانکس انجینئرنگ میں قائم کردیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا جس کا پاکستان میں تعینات چین کے کونسلر برائے ثقافت زھینگ ہیکنگ نے باقاعدہ طور پر سنٹر کا افتتاح کیا۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چین کے قونصلر برائے ثقافت زھینگ ہیکنگ نے کہا کہ چونکہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے اس شعبے میں آٹو میشن اور ٹیکنالوجی کے استعمال سے اس لیب کے قیام سے ایک انقلاب برپا ہوسکتا ہے جس سے ملکی معیشت کو یقینی استحکام مل سکتا ہے۔ انہو ں نے کہا موجودہ 28ہزاز پاکستانی طلباء چین کی مختلف جامعات میں زیر تعلیم ہیں جبکہ چینی حکومت کی جانب سے آٹھ ہزار طلباء کو وظائف بھی مل چکے ہیں۔ تحقیق کے شعبے میں بھی چین پاکستانی ماہرین کی بھر پور مدد کرنے کو تیار ہے۔ پروفیسرزینگ ڈانگ، ڈائریکٹر انسٹیٹیوٹ آف آٹومیشن شینگ ڈانگ اکیڈمی آف سائنسز چائنہ نے اس موقع پر اپنے خطاب کیا اور شعبہ میکاٹرانکس انجینئرنگ کے فیکلٹی کی کوششوں کو سراہا۔وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین نے اس موقع پر اپنے خطاب میں کہا کہ 2018میں دونوں اداروں کے مابین ایک مفاہمت کی یاداشت پر دستخط ہوئے تھے جس کے نتیجے میں یہ لیب دونوں اداروں میں قائم کی گئی ہیں تاکہ ماہرین و محققین مشترکہ تحقیقی پراجیکٹس شروع سکیں۔ اس وقت تحقیق کا مرکز زرعی ٹیکنالوجی اور آٹومیشن ہے جبکہ مستقبل قریب میں توانائی، آرٹیفیشل انٹیلی جینس اور بائیو میڈیکل کے شعبوں پر بھی جلد کام شروع کیا جائے گا۔ اس موقع پر پروفیسر ڈاکٹر ایم اے عرفان، ڈین فیکلٹی آف مکینیکل انجینئرنگ، ڈاکٹر خضر اعظم خان، رجسٹرار یو ای ٹی، پروفیسر ڈاکٹر سید ریاض اکبر شاہ، چئیرمین شعبہ میکاٹرانکس انجینئرنگ، پروفیسر ڈاکٹر طاہر خان، ڈاکٹر شہزاد انور و دیگر فیکلٹی و انتظامی امور کے ارکان کے بھی موجود تھے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر