کیا واقعی آج 10 بجے نوازشریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ سنایا جائے گا؟ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب نے سب کچھ واضح کردیا

کیا واقعی آج 10 بجے نوازشریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ سنایا جائے گا؟ ...
کیا واقعی آج 10 بجے نوازشریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ سنایا جائے گا؟ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب نے سب کچھ واضح کردیا

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ ذیلی کمیٹی کااجلاس آج ہورہا ہے جس میں نیب اور وکلا کو دس بجے تک دستاویزات جمع کرانے کا کہا گیا تھا۔شہزاد اکبر کے اس بیان سے بظاہر یہ لگتاہے کہ نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے معاملے پر کیاگیا ذیلی کمیٹی کا فیصلہ دس بجے سنایا جانا ممکن نہیں ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے معاملے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ نواز شریف سے واپسی کی تاریخ اور ضمانتی بانڈز مانگنا کوئی نئی بات نہیں،عدالت بھی ضمانتی بانڈز جمع کرتی ہے۔شہزاد اکبر کہتے ہیں کہ ماضی میں ایسی مثال نہیں ملتی کہ مجرم کا نام ای سی ایل سے نکالا گیاہو۔انہوں نے مزید کہا کہ ن لیگ اور نیب کوجواب جمع کرانے کےلئے وقت دیاگیاتھا۔

گزشتہ روز کابینہ کی جانب سے نواز شریف کو علاج کیلئے ملک سے باہر جانے اور ان کا نام ای سی ایل سے نکالنے کیلئے مشروط رضامندی ظاہر کی گئی تھی۔حکومت نے شرط عائد کی ہے کہ نواز شریف ملک سے باہرجانے سے پہلے ضمانتی بانڈز جمع کرائیں اور واپسی کی تاریخ بھی متعین کریں تاہم ن لیگ نے نوازشریف کے بیرون ملک جانے کیلئے ضمانتی بانڈز دینے سے انکارکردیا ہے۔اس گتھی کو سلجھانے کیلئے کابینہ کی ذیلی کمیٹی کااجلاس آج دوبارہ وفاقی وزیرقانون فروغ نسیم کی صدارت میں ہونے جا رہاہے۔

مزید : قومی