آدمی تین سال تک اپنی مردہ بیوی اور بچے کی لاشوں کے ساتھ رہتا رہا ،کیا سمجھ کر ایسا کرتا رہا؟جان کر آپ کو بھی بے حد دکھ ہوگا

آدمی تین سال تک اپنی مردہ بیوی اور بچے کی لاشوں کے ساتھ رہتا رہا ،کیا سمجھ کر ...
آدمی تین سال تک اپنی مردہ بیوی اور بچے کی لاشوں کے ساتھ رہتا رہا ،کیا سمجھ کر ایسا کرتا رہا؟جان کر آپ کو بھی بے حد دکھ ہوگا

  

نیروبی(مانیٹرنگ ڈیسک)ہم مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ روزِ محشر ہر انسان کو دوبارہ زندہ ہو کر بارگاہِ ایزدی میں پیش ہونا ہے مگر کینیا میں ایک شخص نے تین سال تک اپنی بیوی اور بچے کی لاشیں اس عقیدے کے تحت گھر میں سنبھال رکھیں کہ وہ نو سال بعد ہی دوبارہ زندہ ہو جائیں گے۔ پولیس نے بات منظرعام پر آتے ہی اس شخص کو گرفتار کر لیا ہے۔

برطانوی اخبار ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق 50سالہ کیٹو مونیوکی نامی اس شخص کے بیٹے کی موت2013ءاور بیوی نڈیلا کی موت2014ءمیں واقع ہوئی تاہم ان کی اموات کی وجوہات سامنے نہیں آ سکیں۔ پولیس نے اطلاع ملنے پر کیٹومونیو کے گھر پر چھاپہ مارا جہاں اس نے دونوں کی لاشیں اچھی طرح حنوط کرکے محفوظ کر رکھی تھیں۔

رپورٹ کے مطابق کیٹومونیو نے پولیس کو بتایا کہ ”مجھے میری بیوی نے مرنے سے قبل ہدایت کی تھی کہ میں ان کی لاشوں کو نہ دفناﺅں بلکہ گھر میں ہی محفوظ کرکے رکھ لوں۔ میری بیوی نے کہا تھا کہ ہم دونوں 9سال بعد دوبارہ زندہ ہو کر تمہارے پاس واپس آ جائیں گے۔ اب بھی میرا یہی خیال ہے کہ مجھے ان کی لاشوں کو دفن نہیں کرنا چاہیے بلکہ اپنی بیوی کی ہدایت کے مطابق مزید چھ سال تک انتظار کرنا چاہیے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -