احتساب عدالت کو نواز شریف کیخلاف ٹرائل مکمل کرنے کیلئے 17نومبر تک کی مہلت

احتساب عدالت کو نواز شریف کیخلاف ٹرائل مکمل کرنے کیلئے 17نومبر تک کی مہلت

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانٹیرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ نے احتساب عدالت کو سابق وزیراعظم نواز شریف کیخلاف العزیزیہ سٹیل ملز اور فلیگ شپ انوسٹمنٹ ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنے کیلئے 17نومبر تک کی مہلت دیدی، چیف جسٹس ثاقب نثار نے یہ آخری توسیع ہے اس کے بعد کوئی توسیع نہیں دی جائے گی ، ہمیشہ آپ کی بات مانی، لیکن یہی تاثر دیا گیا کہ آپ کی بات نہیں مانی، یہ وہ کیس ہے جس نے دو بھائیوں میں تلخی پیدا کی۔ جمعہ کو چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3رکنی بنچ نے سماعت کی۔نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث سپریم کورٹ میں پیش ہوئے اور 6ہفتوں تک مہلت دینے کی استدعا کی۔تاہم عدالت عظمی نے ریمارکس دیئے کہ 4ہفتوں سے زیادہ کی مہلت نہیں دی جاسکتی۔خواجہ حارث نے سپریم کورٹ سے استدعا کی ایک بار تو میری بات بھی مان لی جائے۔جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ہمیشہ آپ کی بات مانی، لیکن یہی تاثر دیا گیا کہ آپ کی بات نہیں مانی۔ساتھ ہی جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے یہ وہ کیس ہے جس نے دو بھائیوں میں تلخی پیدا کی۔چیف جسٹس کا مزید کہنا تھا کہ 'آپ چاہیں تو ہفتے اور اتوار کو بھی کام کر سکتے ہیں، 17 نومبر تک کیسوں کا فیصلہ نہ ہوا تو عدالت اتوار کو بھی لگے گی ۔چیف جسٹس نے کہا اگر اس مدت میں کیسوں کا فیصلہ نہ ہوا تو احتساب عدالت کے جج سے پوچھیں گے۔سماعت کے بعد چیف جسٹس نے دونوں ریفرنسز کے ٹرائل کیلئے 17نومبر تک کی مہلت دیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ یہ آخری توسیع ہے، اس کے بعد کوئی توسیع نہیں دی جائے گی۔

نوازشریف ،ریفرنس

مزید : صفحہ اول