ایران سعودی عرب کشیدگی میں کمی کیلئے وزیر اعظم عمران خان آج تہران جائینگے

ایران سعودی عرب کشیدگی میں کمی کیلئے وزیر اعظم عمران خان آج تہران جائینگے

  

اسلام آباد(آئی این پی،مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم عمران خان آج تہران جائیں گے،جہاں ایرانی قیادت۱ سے ملاقاتوں میں سعودی عرب کیساتھ کشیدگی کم کرنے پر بات چیت ہوگی جبکہ عمران خان مسئلہ کشمیر کی صورتحال سے بھی آگاہ کریں گے۔ نجی ٹی وی کے مطابق  ترجمان دفتر خارجہ نے شیڈول جاری کرتے ہوئے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان کا دورہ ایران علاقائی امن و سلامتی کے منصوبے کا حصہ ہے۔ دورے کے دوران وزیراعظم ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای اور صدر حسن روحانی سے ملاقات کریں گے،جس میں وزیراعظم امن و سلامتی اور باہمی دلچسپی کے امور پر بھی تبادلہ خیال کریں گے۔ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل کے مطابق وزیراعظم عمران خان منگل کو ایک روزہ دورے پرسعودی عرب بھی جائیں گے، وزیراعظم سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے ملاقات میں دورہ ایران پر اعتماد میں لیں گے۔علاوہ ازیں وفاقی کابینہ اجلاس کی تاریخ بھی دورہ سعودی عرب کے باعث تبدیل کردی گئی، وفاقی کابینہ کا اجلاس اب منگل کے بجائے پیر کے روز ہو گا۔دوسری جانب ایران نے سعودی عرب سے جاری کشیدگی میں وزیراعظم عمران خان کی جانب سے ثالثی کی پیشکش کا خیر مقدم کیا ہے۔ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے ترک ٹی وی کو انٹریو دیتے ہوئے سعودی عرب سے جاری کشیدگی کو کم کرنے کیلئے وزیراعظم پاکستان کی جانب سے ثالثی کی پیشکش کو سراہا۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ سعودی عرب سے بات چیت کے علاوہ کوئی دوسری چوائس نہیں، براہ راست یا ثالث کے ذریعے مذاکرات کیلئے تیار ہیں۔جواد ظریف نے کہا کہ ہتھیار خریدنا سکیورٹی کی ضمانت نہیں، سعودی عرب کو ہمسایہ ممالک سے اچھے تعلقات بنانے اور امریکا پر بھروسہ نہیں کرنا چاہئے۔علاوہ ازیں امریکی خبر رساں ادارے نیو یارک ٹائمز نے کہا ہے کہ پاکستان اور عراق ایران اور سعودی عرب کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے کیلئے اپنے اپنے ذرائع استعمال کر رہے ہیں۔ ایک پاکستانی اہلکار نے شناخت مخفی رکھتے ہوئے نیویارک ٹائمز کو بتایا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے عمران خان کو بتایا کہ وہ ایران سے جنگ نہیں چاہتے جبکہ محمد بن سلمان نے پاکستانی وزیراعظم عمران خان سے ثالثی کرنے کی درخواست کی تھی۔عرب خبر رساں ادارے کے مطابق وزیر اعظم کے دورہ سعودی عرب کے چند روز بعد عراقی وزیر اعظم عادل عبدالمہدی نے بھی سعودی ولی عہد سے ملاقات کی تھی۔ عراقی ذرائع کے مطابق بھی سعودی عرب نے ایران کے ساتھ کشیدگی کم کرنے کیلئے عراقی وزیر اعظم سے بھی کردار ادا کرنے کی درخواست کی تھی جبکہ عبدالمہدی نے محمد بن سلمان اور صدر روحانی کو بغداد میں براہ راست ملاقات کی تجویز بھی دی تھی۔

 وزیراعظم/تہران

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -صفحہ اول -