ایران سعودی عرب کشیدگی بڑھی تو خطے میں غربت میں اضافہ ہوگا،عمران خان

ایران سعودی عرب کشیدگی بڑھی تو خطے میں غربت میں اضافہ ہوگا،عمران خان
ایران سعودی عرب کشیدگی بڑھی تو خطے میں غربت میں اضافہ ہوگا،عمران خان

  



تہران (ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سعودی عرب اور ایران کے معاملات کافی پیچیدہ ہیں جوکہ خطے میں امن کےلئے ناگزیر ہیں،پاکستان نہیں چاہتا سعودی عرب اور ایران میں کشیدگی بڑھے،مسائل کا حل مذاکرات سے نکالا جا سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ صدر ٹرمپ نے ایران امریکہ میں بات چیت کیلئے سہولت کاری کیلئے کہا۔ دورہ امریکہ کے دوران ایران کشیدگی پر بات ہوئی تھی ، امریکہ کے ساتھ مذاکرات کیلئے ہر ممکن مدد کریں گے۔

وزیراعظم عمران خان نے ایرانی صدرڈاکٹر حسن روحانی کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب اور ایران کے تنازع کو سنجیدگی سے دیکھ رہے ہیں۔ سعودی عرب اور ایران تنازعہ سے خطے میں غربت میں اضافہ ہو گا۔ پاکستان کسی بھی تنازع کی حمایت نہیں کرے گا،مسائل کا حل مذاکرات سے نکالا جا سکتا ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ سعودی اور ایران میں مسائل حل کرنے کااقدام پاکستان کا اپنا ہے ،پاکستان ثالث نہیں سہولت کار کا کردارادا کرے گا،انہوں نے کہا کہ صدر ٹرمپ نے ایران امریکہ میں بات چیت کیلئے سہولت کاری کیلئے کہا۔ وزیراعظم کا کہناتھا کہ دورہ امریکہ کے دوران ایران کشیدگی پر بات ہوئی تھی ، امریکہ کے ساتھ مذاکرات کیلئے ہر ممکن مدد کریں گے

وزیراعظم عمران خان کا کہناتھا کہ مخالفین چاہتے ہیں سعودی عرب اور ایران کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہو ۔انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان خطے میں مزید کشیدگی نہیں چاہتا،مخالفین چاہتے ہیں سعودی عرب اورایران میں کشیدگی بڑھے،انہوں نے کہا کہ ایران کیساتھ مستحکم تعلقات چاہتے ہیں ،وزیراعظم نے کہا کہ افغانستان عراق اورشام غیر مستحکم ہیں ،افغانستان بھی مشکل فیصلوں سے گزر رہا ہے۔عمران خان نے کہا کہ پاکستان نے دہشتگردی کے باعث لاکھوں جانیں گنوائیں،ایران کیساتھ پاکستان کے دیرینہ تعلقات ہیں ،سعودی عرب کے ساتھ بھی برادرانہ تعلقات ہیں ،سعودی عرب نے ہمیشہ مشکل حالات میں پاکستان کی مدد کی ۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ایرانی صدر کیساتھ کچھ عرصے میں یہ تیسری ملاقات ہے ،ملاقات میں دوطرفہ تعلقات اورتجارت پربات چیت ہوئی،ملاقات میں مختلف معاملا ت پر بھی سیرحاصل گفتگو ہوئی،انہوں نے کہا کہ بھارت نے80کروڑ مسلمانوں کو قید کر کھا ہے،کشمیر کے معاملے پر ایرانی صدر کی حمایت پر شکر گزار ہوں ،1965 میں ایران کا ساتھ دینا آج تک یاد ہے ۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /اسلام آباد