روپے کی بے قدری سے عوام پریشان  حکومت بیان بازی تک محدود‘ ذیشان اختر

  روپے کی بے قدری سے عوام پریشان  حکومت بیان بازی تک محدود‘ ذیشان اختر

  

 بہاولپور (ڈسٹرکٹ رپورٹر)نائب امیر جماعت اسلامی جنوبی پنجاب سید ذیشان اختر نے کہا ہے کہ ملک میں بدترین (بقیہ نمبر60صفحہ 7پر)

مہنگائی اور روپے کی بے قدری کی وجہ سے عوام کی زندگی اجیرن ہوچکی ہے۔ ملک میں معشت کا پہیہ الٹا گھوم رہاہے جس سے ملک کے مستقبل کے حوالے سے عام آدمی سخت مایوسی کا شکار ہے۔ پاکستان پر اس وقت 43 ہزار ارب روپے سے زائد قرضہ ہے مگر حکومت اب بھی دھڑا دھڑ قرضے لے رہی ہے۔ موجودہ حکومت نے ڈالر کو 168 روپے تک پہنچا دیا ہے۔ پی ٹی آئی حکومت میں روپیہ مسلسل گراوٹ کا شکار ہے اور اب تو نیپال، بھوٹان، بنگلا دیشن اور سری لنکا کی کرنسی بھی پاکستان سے زیادہ طاقتور ہوچکی ہے۔ انہوں نے کہاکہ واحد حکومت ہے جس نے عالمی وبا کرونا کے دوران ملنے والی اربوں روپے کی امداد ی رقم بھی ہڑپ کرلی ہے اور متاثرین کے ہاتھ کچھ نہیں آیا۔ انہوں نے کہاکہ اس وقت ملکی معیشت کی شرح نمو 0.4 فیصد رہ گئی ہے۔ حکومت کے دو سالوں میں چینی پچاس روپے سے 100 ر وپے اور آٹا 80 روپے فی کلو تک پہنچ گیاہے۔ غریب کے لیے اپنے شیر خوار بچوں کیلئے دودھ خریدنا مشکل ہوچکاہے۔ حکومت نے ایک کروڑ نوکریوں کا وعدہ کر کے 70 لاکھ سے زیادہ لوگوں سے روزگار چھین لیاہے۔ ملک کا مزدور اور کسان دن رات حکومت سے نجات کیلئے دعائیں کر رہاہے۔انہوں نے کہاکہ حکومت نے احتساب کے بلند و بانگ دعوے کیے تھے مگر دو سال سے صرف مخالفین کا احتساب کر رہی ہے کسی وزیر مشیر کو احتساب کے کٹہرے میں کھڑا نہیں کیا گیا۔ جن لوگوں کا احتساب ہونا چاہیے تھا وہ خود حکومت میں بیٹھے ہیں۔ وزیراعظم کہتے ہیں کہ ان کے گرد بڑے بڑے مافیاز کا گھیرا ہے۔ وزیراعظم ان مافیاز سے کیوں بلیک میل ہورہے ہیں، انہیں قوم کے سامنے رکھنا چاہیے۔ انہوں نے کہاکہ آٹا چینی، ڈرگ اور لینڈ مافیا عوام کے مجبوریوں سے کھیل رہاہے مگر وزیراعظم بیانات سے آگے نہیں بڑھ رہے۔

ذیشان اختر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -