جامعہ پشاور کے کنٹریکٹ ملازمین کا احتجاجی دھرنا شدت اختیار کرگیا 

جامعہ پشاور کے کنٹریکٹ ملازمین کا احتجاجی دھرنا شدت اختیار کرگیا 

  

پشاور(سٹی رپورٹر)جامعہ پشاور کے کنٹریکٹ ملازمین کا احتجاجی دھرنا شدت اختیار کر گیا ملازمین نے پیوٹا چو ک میں تک احتجاجی مظاہرہ وسیع کر دیا  جبکہ انتظامیہ کی جانب سے تا حال ملازمین کیساتھ کوئی  رابطہ نہ ہوسکا جسکے باعث ملازمین میں بے چینی پائی جانے لگی ملازمین کے مطابق 12سال سے کنٹریکٹ پر کام کر رہے انتظامیہ نے نہ تو مستقلی کیلئے سنجیدگی سے اقدامات اٹھائے او ن ہی رینول دے رہے ہے جسکے باعث سینکڑوں ملازمین کی تنخواہیں بند ہے اور  انکے گھروں میں فاقہ کشی کا عالم ہے انہوں نے کہاکہ  یونیورسٹی کی نا اہل انتظامیہ جامعہ کو چلانے میں نا کام ہو چکی ہے اور انتظامی عہدوں  اضافی چارج  کیساتھ برجمان ٹیچنگ کیڈر کے افسران نے یونیورسٹی اپنا  راج قائم رکھا ہے اور کوئی پوچھنے والا نہیں  جبکہ یونیورسٹی کے رجسٹرار ایک سے زائد انتطامی عہدوں پر کام کر رہے ہے جو یونیورسٹی ایکٹ کے بھی خلاف ہے ملازمین نے گورنر خیبر پختونخوا سے مطالبہ کیا ہے کہ کنٹریکٹ ملازمین کو رینول دینے سمیت انکی مستقلی کیلئے اقدامات کیے جائے جبکہ یونیورسٹی میں انتظامی عہدوں پر  اضافی چارج پر تعینات ٹیچنگ کیڈر کے افسران کے خلاف کارروائی کی جائے بصورت دیگر احتجاجی دھرنا جاری رہے گا واضح رہے کہ ملازمین پچھلے چار ہفتوں سے دھرنا دیے ہوئے ہیں جبکہ روزانہ کی بیاد پر احتجاج کے طور پر یونیورسٹی میں ریلی نکالتے اور وائس چانسلر آفس کے سامنے دھرنا دیتے ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -