جھانکتے لوگ کھلے دروازے| محمود شام |

جھانکتے لوگ کھلے دروازے| محمود شام |
جھانکتے لوگ کھلے دروازے| محمود شام |

  

جھانکتے لوگ کھلے دروازے

چاند کا شہر بنے دروازے

کس کی آہٹ کا فسوں طاری ہے

 محو   ہیں آج بڑے دروازے

بول کے دیں نہ کبھی دیواریں

 سر پٹختے ہی رہے دروازے

لوگ محفوظ ہوئے کمروں میں

 برف کی زد میں رہے دروازے

کبھی سورج کی کبھی ظلمت کی

 مار سہتے ہی رہے دروازے

رات بھر چاندنی ٹکرائی مگر

 صبح ہوتے ہی کھلے دروازے

دیکھ وہ شامؔ کی آہٹ اُبھری

 دیکھ وہ بند ہوئے دروازے

شاعر: محمود شام

Jhaanktay   Log   Khulay   Darwaazay

Chaand   Ka   Shehr    Banay   Darwaazay

 Kiss   Ki   Aahat   Ka   Fusoon   Taari   Hay

Mehv   Hen   Aaaj   Barray   Darwaazay

 Bol   K   Den   Na   Kabhi   Dewaaren

Sar    Patakhtay   Hi   Rahay   Darwaazay

 Log   Mehfooz   Huay   Kamron   Men

Barf    Ki    Zadd   Men   Rahay   Darwaazay

 Kabhi   Sooraj   Ki   Kabhi    Zulmat    Ki

Maar    Sehtay    Hi    Rahay   Darwaazay

 Raat    Bhar    Chaandni    Takraai    Magar

Subh    Hotay    Hi    Khulay    Darwaazay

 Dekh    Wo    SHAM    Ki    Aahat   Ubhri

Dekh    Wo    Band   Huay   Darwaazay

 Poet: Mehmood   Sham

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -