اُس کو تکتے بھی نہیں تھے پہلے| محمود شام |

اُس کو تکتے بھی نہیں تھے پہلے| محمود شام |
اُس کو تکتے بھی نہیں تھے پہلے| محمود شام |

  

اُس کو تکتے بھی نہیں تھے پہلے

 ہم بھی خوددار تھے کتنے پہلے

اس کو دیکھا تو یہ محسوس ہوا

 ہم بہت دور تھے خود سے پہلے

دل نظر آتے ہیں اب آنکھوں میں

 کتنے گہرے تھے یہ چشمے پہلے

کھوئے رہتے ہیں اب اس کی دھن میں

 جس کو تکتے نہ تھے پہلے پہلے

ہم کو پہچان لیا کرتے تھے

 یہ ترے شہر کے رستے پہلے

اب اجالوں میں بھٹک جاتے ہیں

 وہ سمجھاتے تھے اندھیرے پہلے

اب نہ الفاظ نہ احساس نہ یاد

 اتنے مفلس نہ ہوئے تھے پہلے

رنگ کے جال میں آتے نہ کبھی

 پاس سے دیکھ جو لیتے پہلے

گرم ہنگامۂ کاغذ ہے یہاں

 بے مہک پھول کہاں تھے پہلے

شاعری: محمود شام

Uss   Ko   Taktay   Bhi    Nahen   Thay    Pehlay

Ham   Bhi   Khuddaar    Thay   Kitnay   Pehlay

 Uss    Ko    Dekha   To   Yeh    Mehsoos   Hua

Ham   Bahut   Door    Thay    Khud   Say   Pehlay

 Dil   Nazar   Aatay    Hen    Ab   Aankhon   Men

Kitnay    Gehray    Thay   Yeh    Chashmay   Pehlay

Khoay    Rehtay    Hen    Ab    Uss   Ki    Dhun    Men

Jiss    Ko    Taktay    Na    Thay    Pehlay    Pehlay     Pehlay

 Ham    Ko    Pehchaan    Liya    Kartay   Thay

Yeh    Tiray    Shehr    K   Rastay   Pehlay

 Ab    Ujaalon    Men    Bhatak    Jaatay   Hen

Wo    Smajhaatay    Thay   Andhairay   Pehlay

 Ab    Na    Alfaaz    Na    Ehsaas    Na   Yaad

Itnay    Mufliss    Na   Huay   Thay   Pehlay

 Rang    K    Jaal    Men    Aatay    Na   Kabhi 

Paas    Say    Dekh    Jo   Letay    Pehlay

 Garm    Hangaama-e-Kaaghaz    Hay   Yahaan

Be   Mahak     Phool    Kahan   Thay   Pehlay

 Poet: Mehmood   Sham

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -