تیرے دیوانے تری چشم و نظر سے پہلے |مخدوم محی الدین |

تیرے دیوانے تری چشم و نظر سے پہلے |مخدوم محی الدین |
تیرے دیوانے تری چشم و نظر سے پہلے |مخدوم محی الدین |

  

تیرے دیوانے تری چشم و نظر سے پہلے 

دار سے گزرے تری راہ گزر سے پہلے 

بزم سے دور وہ گاتا رہا تنہا تنہا 

سو گیا ساز پہ سر رکھ کے سحر سے پہلے 

اس اندھیرے میں اجالوں کا گماں تک بھی نہ تھا 

شعلہ رو شعلہ نوا شعلہ نظر سے پہلے 

کون جانے کہ ہو کیا رنگِ سحر رنگِ چمن 

مے کدہ رقص میں ہے پچھلے پہر سے پہلے 

نکہتِ یار سے آباد ہے ہر کنج قفس 

مل کے آئی ہے صبا اس گل تر سے پہلے 

شاعر: مخدوم محی الدین

(شعری مجموعہ:بساطِ رقص؛سالِ اشاعت،1986)

Teray     Dewaanay   Tiri   Chashm-o-Nazar    Say   Pehlay

Daar   Say   Guzray   Tiri    Raah   Guzar    Say   Pehlay

 Bazm   Say     Door   Wo    Gaata    Raha   Tanha   Tanha

 So    Gay    Saz    Pe    Sar    Rakh   K   Sahar    Say   Pehlay

 Iss    Andhairay    Men   Ujaalon   Ka   Gumaan   Tak    Bhi   Na   Tha

Shola   Ru    Shola    Nawaa    Shoal   Nazar    Say   Pehlay

 Kon    Jaanay   Keh    Ho   Kaya    Rang-e-Sahar    Rang-e-Chaman

May    Kadaa    Raqs    Men    Hay    Pichhlay   Pahar    Say   Pehlay

Nikhat-e-Yaar    Say    Abaad    Hay   Kunj-e-Qafass

Mill   K    Aai   Hay    Sabaa    Uss    Gul-e-Tar    Say   Pehlay

 Poet: Makhdoom   Muahiudin 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -