اُسی چمن میں چلیں جشنِ یاد یار کریں|مخدوم محی الدین |

اُسی چمن میں چلیں جشنِ یاد یار کریں|مخدوم محی الدین |
اُسی چمن میں چلیں جشنِ یاد یار کریں|مخدوم محی الدین |

  

اُسی چمن میں چلیں جشنِ یاد یار کریں

دلوں کو چاک گریباں کو تار تار کریں

شمیمِ پیرہنِ یار کیا نثار کریں

تجھی کو دل سے لگا لیں تجھی کو پیار کریں

سناتی پھرتی ہیں آنکھیں کہانیاں کیا کیا

اب اور کیا کہیں کس کس کو سوگوار کریں

اٹھو کہ فرصتِ دیوانگی غنیمت ہے

قفس کو لے کے اُڑیں گل کو ہمکنار کریں

کمانِ ابروئے خوباں کا بانکپن ہے غزل

تمام رات غزل گائیں دیدِ یار کریں

شاعر: مخدوم محی الدین

(شعری مجموعہ:بساطِ رقص؛سالِ اشاعت،1986)

Usi    Chaman   Men   Chalen   Jashn-e-Yaad-e-Yaar    Kren

Dilon    Ko   Chaak    Grebaan   Ko   Taar   Taar    Kren

 Shameem-e-   Pairhan-e-Yaar    Kaya    Nisaar   Karen

Tujhi    Ko    Dil    Say    Laga    Len    Tujhi    Ko    Payaar    Kren

 Sunaati    Phirti    Hen    Aankhen    Kahaaniyaan    Kaya   Kaya

Ab   Aor    Kaya    Kahen      Kiss    Kiss    Ko    Sogwaar   Karen

 Uhto    Keh    Fursat-e-Dewaangi    Ghaneemat   Hay

Qafas    Ko    Lay    K    Urren     Gull    Ko    Hamkinaar    Kren

 Kamaan-e-Abru-e-Khoobaan    Ka    Baankpan    Hay   Ghazal

Tamaam    Raat    Ghazal     Gaaen    Deed-e-Yaar    Kren

 Poet: Makhdoom   Muhaiudin

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -