سحر سے رات کی سرگوشیاں بہار کی بات |مخدوم محی الدین |

سحر سے رات کی سرگوشیاں بہار کی بات |مخدوم محی الدین |
سحر سے رات کی سرگوشیاں بہار کی بات |مخدوم محی الدین |

  

سحر سے رات کی سرگوشیاں بہار کی بات 

جہاں میں عام ہوئی چشمِ انتظار کی بات 

دلوں کی تشنگی جتنی دلوں کا غم جتنا 

اسی قدر ہے زمانے میں حسنِ یار کی بات 

جہاں بھی بیٹھے ہیں جس جا بھی رات مے پی ہے 

انہی کی آنکھوں کے قصے انہی کے پیار کی بات 

چمن کی آنکھ بھر آئی کلی کا دل دھڑکا 

لبوں پہ آئی ہے جب بھی کسی قرار کی بات 

یہ زرد زرد اُجالے یہ رات رات کا درد 

یہی تو رہ گئی اب جانِ بے قرار کی بات 

تمام عمر چلی ہے تمام عمر چلے 

الٰہی ختم نہ ہو یارِ غم گسار کی بات 

شاعر: مخدوم محی الدین

(شعری مجموعہ:بساطِ رقص؛سالِ اشاعت،1986)

Sahar   Say   Raat   Ki    Sargoshiyaan    Bahaar   Ki   Baat 

Jahaan    Men    Aaam   Hui   Chashm-e-Intzaar   Ki   Baat

 Dil   Ki   Tashngi    Jitni    Dilon   Ka   Gham   Jitna

Isi    Qadar   Hay   Zamaanay   Men   Husn-e-Yaar   Ki   Baat

 Jahan   Bhi   Baithay    Hen    Jiss    Jaa    Bhi    Raat    May   Pi

Unhi    Ki   Aankhon   K    Qissay    Unhi   K   Payaar   Ki   Baat

 Chaman    Ki    Aankh    Bhar    Aai    Kali    Ka   Dil   Dharrka

Labon   Pe   Aai   Hay   Jab   Bhi    Kisi   Qaraar   Ki   Baat

Yeh   Zard    Zard   Ujaalay   Yeh   Raat   Raat   Ka   Dard

Yahi   To   Reh   Gai   Ab   Jaan-e-Be   Qaraar   Ki   Baat

 Tamaam   Umr   Chali   Hay   Tamaam   Umr   Chalay

ELAHI   Khatm   Na   Ho   Yaar-e-Ghamgusaar   Ki   Baat

Poet: Makhdoom   Muhiudin 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -