جب یار نے اُٹھا کر زُلفوں کے بال باندھے | مرزا رفیع سودا |

جب یار نے اُٹھا کر زُلفوں کے بال باندھے | مرزا رفیع سودا |
جب یار نے اُٹھا کر زُلفوں کے بال باندھے | مرزا رفیع سودا |

  

جب یار نے اُٹھا کر زُلفوں کے بال باندھے 

تب میں نے اپنے دل میں لاکھوں خیال باندھے 

 تارِ نگہ میں اس کے کیونکر پھنسے نہ یہ دل 

آنکھوں نے جس کے لاکھوں وحشی غزال باندھے 

تیرے ہی سامنے کچھ بہکے ہے میرا نالہ 

ورنہ نشانے ہم نے مارے ہیں بال باندھے 

بوسہ کی تو ہے خواہش پر کہیے کیونکر  اس سے 

جس کا مزاج لب پر حرفِ سوال باندھے 

ماروگے کس کو جی سے کس پر کمر کسی ہے 

پھرتے ہو کیوں پیارے تلوار ڈھال باندھے 

دو چار شعر آگے اس کے پڑھے تو بولا 

مضموں یہ تو نے اپنے کیا حسبِ حال باندھے 

سوداؔ جو ان نے باندھا زلفوں میں دل سزا ہے 

شعروں میں اس کے تو نے کیوں خط و خال باندھے 

شاعر: مرزا رفیع سودا

(شعری مجموعہ:کلیاتِ سودا ؛سالِ اشاعت،1932)

Yaar   Nay   Utha   Kar   Zulfon   K    Baal    Baandhay

Tab   Main   Nay   Apnay   Dil   Men   Laakhon   Khayaal    Baandhay

 Taar-e-Nigah   Men   Uss   K   Kiun   Kar   Phansay   Na   Yeh   Dil

Aankhon   Nay   Jiss   K   Laakhon    Weshi   Ghazaal    Baandhay

 Teray   Hi   Saamnay    Kuchh    Behkay   Hay   Mera   Naala

Warna    Nishaanay   Ham   Nay   Maaray   Hen   Baal    Baandhay

 Bosa   Ki   To   Hay   Khaahish   Par    Kahiay   Kiun   Kar   Uss   Say

Jiss   Ka    Mizaaj   Lab   Par   Harf-e -Sawaal    Baandhay

 Maaro    Gay   Kiss   Ko   Ji   Say   Kiss   Par   Kamar   Kasi   Hay

Phirtay   Ho   Kiun   Payaaray    Talwaar    Dhaal    Baandhay

 Do   Chaar   Sher    Aagay   Uss   K   Parrhay    To   Bola

Maazmoon    Yeh    Tu    Nay    Apnay    Kaya   Hasb-e-Haal    Baandhay

 SOUDA    Jo    Un    Nay    Baandha    Zulfon    Men    Dil    Sazaa   Hay

Sheron    Men   Uss    K   Tu    Nay    Kiun    Khat-o-Khaal    Baandhay

 Poet: Mirza   Rafi   Souda

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -