جو گزری مجھ پہ مت اُس سے کہو ہوا سو ہوا | مرزا رفیع سودا |

جو گزری مجھ پہ مت اُس سے کہو ہوا سو ہوا | مرزا رفیع سودا |
جو گزری مجھ پہ مت اُس سے کہو ہوا سو ہوا | مرزا رفیع سودا |

  

جو گزری مجھ پہ مت اُس سے کہو ہوا سو ہوا 

بلا کشانِ محبت پہ جو ہوا سو ہوا 

پہنچ چکا ہے سر زخمِ دل تلک یارو 

کوئی سبو کوئی مرہم رکھو ہوا سو ہوا 

نہ کچھ ضرر ہوا شمشیر کا نہ ہاتھوں کا 

مرے ہی سر پہ اے جلاد جو ہوا سو ہوا 

یہ کون حال ہے احوالِ دل پہ اے آنکھو 

نہ پھوٹ پھوٹ کے اتنا بہو ہوا سو ہوا 

دیا اسے دل و  دیں اب یہ جان ہے سوداؔ 

پھر آگے دیکھیے جو ہو سو ہو ، ہوا سو ہوا 

شاعر: مرزا رفیع سودا

(شعری مجموعہ:کلیاتِ سودا ؛سالِ اشاعت،1932)

Jo   Guzri   Mujh   Pe   Mat   Uss   Say   Kaho   Hua  So   Hua

Balaa   Kashaan-e-Muhabbat   Pe    Jo    Hua  So   Hua

Pahunch    Chuka   Hay   Sar   Zakhm-e-Dil   Talak   Yaaro

Koi   Subu   Koi    Mahram   Rakho   Hua  So   Hua

 Na   Kuchh   Zarar   Hua   Shamsheer   Ka   Na   Haathon   Ka

Miray   Sar   Pe   Ay   Jallaad    Jo   Hua    So   Hua

 Yeh   Kon   Haal   Hay   Ahwaal-e-Dil   Ay   Aankho

Na   Phoot    Phoot   K    Itna  Baho   Hua   So   Hua

  Diya   Usay    Dil-o-Deen   Ab   Yeh    Jaan   Hay   SOUDA

Phir   Aa   K   Daikhiay   Jo   Ho   So   Ho ,   Hua   So   Hua

  Poet: Mirza   Rafi   Souda

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -