گر کیجئے انصاف تو  کی زور وفا میں | مرزا رفیع سودا |

گر کیجئے انصاف تو  کی زور وفا میں | مرزا رفیع سودا |
گر کیجئے انصاف تو  کی زور وفا میں | مرزا رفیع سودا |

  

گر کیجئے انصاف تو  کی زور وفا میں 

خط آتے ہی سب چل گئے اب آپ ہیں یا میں 

تم جن کی ثنا کرتے ہو کیا بات ہے ان کی 

لیکن ٹک ادھر دیکھیو اے یار بھلا میں 

جب میں گیا اس کے تو اسے گھر میں نہ پایا 

آیا وہ اگر میرے تو در خود نہ رہا میں 

  

یارو نہ بندھی اس سے کبھو شکلِ ملاقات 

ملنے کو تو اس شوخ کے ترسا ہی کیا میں

کیفیتِ چشم اس کی مجھے یاد ہے سوداؔ 

ساغر کو مرے ہاتھ سے لیجو کہ چلا میں 

شاعر: مرزا رفیع سودا

(شعری مجموعہ:کلیاتِ سودا ؛سالِ اشاعت،1932)

Gar   Kijiay   Insaaf    To    Ki   Zor-e-Wafaa   Main

Khat   Aatay   Hi   Sab    Chall   Gaey   Ab   Aap   Hen Ya    Main

 Tum   Jin    Ki   Sanaa   Kartay   Ho   Kaya   Baat   Hay   In   Ki

Lekin   Tukk   Idhar    Ddaikhio   Ay    Yaar    Bhalaa   Main

 Jab   Main   Gaya   Uss   K   To   Usay   Ghar   Na   Paaya

Aaya   Wo   Agar   Meray   To   Dar   Khud   Na   Rahaa   Main

 Yaaro   Na   Bandhi   Uss   Say   Kabhoo   Shakl-e-Mulaqaat

Milnay   Ko   To   Uss   Shokh   K   Tarsa   Hi   Kaya   Main

Kaifiyat-e-Chashm   Uss   Ki   Mujhay   Yaad   Hay   SOUDA

Shaghar   Ko   Miray   Haath   Say   Lijo   Keh   Chalaa   Main

 Poet: Mirza   Rafi   Souda

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -