دل تجھ کو دیا، لے مرا غم خوار یہی تھا | مصحفی غلام ہمدانی |

دل تجھ کو دیا، لے مرا غم خوار یہی تھا | مصحفی غلام ہمدانی |
دل تجھ کو دیا، لے مرا غم خوار یہی تھا | مصحفی غلام ہمدانی |

  

دل تجھ کو دیا، لے مرا غم خوار یہی تھا 

پاس اپنے تو اے شوخ! ستم گار یہی تھا 

اب جس دلِ خوابیدہ کی کھلتی نہیں آنکھیں 

راتوں کو سرہانے مرے بیدار یہی تھا 

بوسے کے عوض تم تو لگے گالیاں دینے 

کل تم سے ہمارا میاں! اقرار یہی تھا

دیکھی جو مری نعش تو کر اس کو اشارہ 

بولا کہ مری چشم کا بیمار یہی تھا 

کیوں مصحفیؔ خستہ کے تئیں تو نے کیا قتل 

کیا سینکڑوں عاشق میں گنہگار یہی تھا

شاعر: مصحفی غلام ہمدانی

(شعری مجموعہ:دیوانِ مصحفی ؛مرتبہ،نورالحسن نقوی، سالِ اشاعت،1966)

Dil  Tujh   Ko   Diya   ,   Lay    Mira   Ghamkhaar   Yahi   Tha

Paas   Apnay   To   Ay   Shokh !   Sitam   Gaar   Yahi   Tha

 Ab   Jiss   Dil-e-Khabeeda   Ki   Khulti   Nahen   Aankhen

Raaton   Ko  Sarhaanay   Miray   Baidaar   Yahi   Tha

Bosay    K   Iwazz   Tum   To    Lagay    Gaaliyaan   Denay

Kall   Tum   Say   Hamaara   Miyan !    Iqraar   Yahi   Tha

  Dekhi   Jo   Miri   Naash    To   Kar   Uss   Ko   Ishaara

Bola   Keh   Miri   Chashm   Ka   Beemaar   Yahi   Tha

Kiun   MASHAFI    Khasta   K   Taeen   Tu   Nay  Kiya   Qatl

Kaya    Sainkarron    Aashiq   Men   Gunehgaar   Yahi   Tha

Poet; Mashafi    Gulam   Hamdani 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -