شرجیل خان، شان مسعود اور خرم منظور بھی قومی ٹی 20 ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے سخت مقابلہ ، تینوں نے نیشنل ٹی 20 کپ میں کیسی کارکردگی دکھائی؟

شرجیل خان، شان مسعود اور خرم منظور بھی قومی ٹی 20 ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے سخت ...
شرجیل خان، شان مسعود اور خرم منظور بھی قومی ٹی 20 ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے سخت مقابلہ ، تینوں نے نیشنل ٹی 20 کپ میں کیسی کارکردگی دکھائی؟

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نیشنل ٹی 20 کپ میں اوپنرز امام الحق، فخرزمان، خرم منظور، شان مسعود اور شرجیل خان کی طرف سے چند قابل ذکر اننگز دیکھنے میں آئی ہیں جس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ پاکستانی ٹی 20 ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے اوپنرز میں کتنا سخت مقابلہ ہے۔

تفصیلات کے مطابق جارح مزاج اوپننگ بلے باز فخر زمان طویل عرصے بعد فارم میں واپس آ چکے ہیں اور نیشنل ٹی 20 کپ میں چند عمدہ اننگز کھیلی ہیں جبکہ امام الحق اس وقت قومی ٹی 20 ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے بلے باز ہیں بلکہ جنہوں نے 94، 80 ناٹ آؤٹ اور 92 ناٹ آؤٹ کی تین اہم اننگز بھی کھیلی ہیں۔ 

ان دونوں کیساتھ ساتھ شرجیل خان خرم منظور اور شان مسعود میں بھی خاصا سخت مقابلہ دکھائی دے رہا ہے۔ سپاٹ فکسنگ میں سزا مکمل ہونے کے بعد شرجیل خان کی کرکٹ کے میدانوں میں واپسی ہو چکی ہے جو رواں سال کے آغاز میں پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) میں کراچی کنگز کی نمائندگی کرتے ہوئے 9 اننگز میں ایک نصف سنچری سکور کرنے میں کامیاب ہوئے تھے اور نیشنل ٹی 20 کپ میں وہ 77 اور 90 رنز کی دو اچھی اننگز کھیل چکے ہیں، پی ایس ایل میں ان کی فٹنس پر سوالیہ نشان لگا تھا اور اب بھی ماہرین اور مبصرین کا یہی کہنا ہے کہ انٹرنیشنل کرکٹ میں واپسی کیلئے شرجیل خان کو مکمل فٹ ہونا پڑے گا اسی صورت میں وہ اپنا کیس مضبوط طریقے سے پیش کر سکیں گے۔

شان مسعود عام طور پر ٹیسٹ بیٹسمین کے طور پر پہچانے جاتے رہے ہیں جنہوں نے انگلینڈ کے حالیہ دورے میں مانچسٹر ٹیسٹ میچ کے دوران 156 رنز کی عمدہ اننگز کھیلی تھی تاہم اب وہ ٹی 20 فارمیٹ میں بھی ابھر کر سامنے آئے ہیں۔ ان کی قیادت میں ملتان سلطانز کی ٹیم پاکستان سپر لیگ کے پلے آف میں پہنچ چکی ہے۔ شان مسعود نے کراچی کنگز کے خلاف 61 رنز کی اننگز کھیلی تھی تاہم وہ اس میچ میں ون ڈاؤن پر کھیلے تھے لیکن نیشنل ٹی 20 کپ میں اوپنر کی حیثیت سے کھیلتے ہوئے وہ دو نصف سنچریاں سکور کر چکے ہیں۔

خرم منظور پاکستان کی ٹی 20 کرکٹ میں شعیب ملک اور کامران اکمل کے بعد سب سے زیادہ مجموعی رنز بنانے والے بیٹسمین ہیں جبکہ موجودہ ٹورنامنٹ میں بھی وہ ایک سنچری اور دو نصف سنچریاں سکور کر چکے ہیں اور سب سے زیادہ رنز کے اعتبار سے امام الحق اور فخر زمان کے بعد تیسرے نمبر پر ہیں لیکن ایسا لگتا ہے کہ ان کا بین الاقوامی کیرئیر شاید ہی دوبارہ شروع ہو سکے کیونکہ 2014ءمیں انہوں نے آخری بار ٹیسٹ کرکٹ میں پاکستان کی نمائندگی کی تھی۔

2016 میں وہ ایشیا کپ ٹی 20 ٹورنامنٹ کھیلے تھے لیکن تین میچوں میں وہ صرف 11 رنز بنانے میں کامیاب ہو سکے تھے جس کے بعد انہیں ٹی 20 ورلڈ کپ کی ٹیم سے ڈراپ کر کے احمد شہزاد کو شامل کر لیا گیا تھا اور اس وقت کے چیف سلیکٹر ہارون رشید نے ایشیاءکپ میں ان کی سلیکشن کو اپنی غلطی سے تعبیر کیا تھا۔ خرم منظور نے پاکستانی ٹیم میں منتخب نہ ہونے پرگزشتہ سال پی سی بی پر سخت تنقید کی تھی اور کہا تھا کہ ڈومیسٹک کرکٹ میں مستقل اچھی کارکردگی کے باوجود نظرانداز کیا جانا تکلیف دہ بات ہے۔

مزید :

کھیل -